اسلام ٹائمز 22 Nov 2020 گھنٹہ 23:02 https://www.islamtimes.org/ur/news/899361/کسی-بھی-قسم-کی-جارحیت-صورت-میں-بھرپور-جواب-دیں-گے-شاہ-محمود-قریشی -------------------------------------------------- ٹائٹل : کسی بھی قسم کی جارحیت کی صورت میں بھرپور جواب دیں گے، شاہ محمود قریشی  -------------------------------------------------- ملتان میں مختلف تقریبات سے خطاب کرتے ہوئے وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ ہماری تشویش کل بھی درست تھی اور آج بھی درست ہے، مقبوضہ جموں و کشمیر میں حالات مزید خراب ہوتے چلے جا رہے ہیں، مسلمانوں کے ساتھ ناروا سلوک صرف وادی تک محدود نہیں یہ سلوک پورے ہندوستان کے مسلمانوں کے ساتھ روا رکھا جا رہا ہے۔ متن : اسلام ٹائمز۔ وزیرخارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ بھارت پاکستان میں دہشت گردی کی منصوبہ بندی کر رہا ہے، ہندوستان نے اس مقصد کیلئے ایک سیل بنایا ہے جس کے لیے 80 ارب کے لگ بھگ رقم مختص کی گئی ہے، حکومت پاکستان نے اپنے خدشات سے عالمی برادری کو آگاہ کر دیا ہے، بھارتی ہتھکنڈوں پر پاکستان خاموش نہیں رہے گا، بھارت کا رویہ غیرذمہ دارانہ ہے اس کو ہر محاذ پر ناکامی ہوگی، خطے میں امن نہ صرف ہماری خواہش ہے بلکہ اولین ترجیح لیکن امن کی خواہش کو کمزوری نہ سمجھا جائے۔ کسی بھی قسم کی جارحیت کی صورت میں بھرپور جواب دیں گے، پاکستان کی طرف دیکھنے والی میلی آنکھ کو نکال باہر کریں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے عوامی رابطہ مہم کے سلسلے میں این اے 156 کی مختلف کونسلوں کے دورہ کے دوران تقریبات سے خطاب وفود سے ملاقات کے دوران کیا۔ انہوں نے کہا ہندوستان کی جانب سے مسلمانوں کی نسل کشی کے حوالے سے عالمی برادری میں سخت پائی جاتی ہے۔ پاکستان، پہلے ہی سے مختلف فورمز پر اس تمام صورتحال کی نشاندہی کر چکا ہے اور اپنی تشویش کا اظہار کرتا چلا آ رہا ہے، ہماری تشویش کل بھی درست تھی اور آج بھی درست ہے، مقبوضہ جموں و کشمیر میں حالات مزید خراب ہوتے چلے جا رہے ہیں، مسلمانوں کے ساتھ ناروا سلوک صرف وادی تک محدود نہیں یہ سلوک پورے ہندوستان کے مسلمانوں کے ساتھ روا رکھا جا رہا ہے۔ دہلی اور گجرات میں جو ہوا وہ سب کے سامنے ہے، پاکستان نے بھارت کے اس سلوک کو عالمی دنیا تک اجاگر کیا اور اقوام متحدہ سمیت تمام عالمی فورمز پر اجاگر کیا۔ اب یہ میڈیا کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ بھارت کے حوالے سے پاکستانی خدشات کو عالمی برادری تک پہنچائے۔ انہوں نے کہا کہ کرونا کی دوسری لہر انتہائی شدید ہے عوام احتیاط کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں اور جس حد تک ہو سکے ماسک پہنیں اور سماجی فاصلے کی ہدایات پر عمل درآمد کریں۔ کورونا وبا پر قابو اور معاشی نقصان سے بچنے کے لیے این سی او سی کی تجاویز پر عمل ضروری ہے۔ اگر عوام کرونا کے حوالے سے ایس او پیز پر عمل درآمد نہیں کریں گے تو حکومت کو مجبورا سخت فیصلے کرنا پڑیں گے۔ انہوں نے کہا عوام سے تعلق ہے اور عوامی سیاست کرتا ہوں۔