اسلام ٹائمز 29 Jun 2022 گھنٹہ 16:45 https://www.islamtimes.org/ur/news/1001782/دشمن-جنگ-بندی-کو-اپنے-فائدے-کیلئے-استعمال-کر-رہا-ہے-ضیف-اللہ-شامی -------------------------------------------------- ٹائٹل : دشمن جنگ بندی کو اپنے فائدے کیلئے استعمال کر رہا ہے، ضیف اللہ شامی -------------------------------------------------- انٹرنیشنل میڈیا سے بات کرتے ہوئے یمن کے وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ جنگ بندی کے بعد فوجی کارروائیاں تو رک گئی ہیں لیکن سرحدی علاقوں اور اگلے مورچوں (Front line) پر بار بار جنگ بندی کی خلاف ورزیاں ہو رہی ہیں۔ متن : اسلام ٹائمز۔ یمن کے وزیر اطلاعات کا کہنا ہے کہ جنگ بندی کا کوئی خاطر خواہ ہدف حاصل نہیں ہوا بلکہ سعودی اتحاد اسے اپنے فائدے کے لئے استعمال کر رہا ہے۔ یمن کی قومی نجات حکومت کے وزیر اطلاعات ضیف اللہ الشامی نے کہا کہ دشمن اور قابضین عارضی جنگ بندی کو یمن پر اپنے اثر و رسوخ اور لوٹ مار کو مضبوط کرنے کے لیے استعمال کر رہے ہیں۔ انہوں نے فارس نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ انسانی بنیادوں پر اقوام متحدہ کا معاہدہ تو موجود ہے لیکن عملی طور پر تقریباً نہ ہونے کے برابر ہے، درحقیقت جنگ بندی کا یہ منصوبہ جارح سعودی اتحاد کی مدد کرتا ہے۔ یمنی قومی نجات حکومت کے اس  اعلیٰ عہدیدار نے جنگ بندی کے متن کی بنیاد پر تمام جارحانہ فوجی کارروائیوں کو روکنے کے مسئلے پر بات کرتے ہوئے کہا کہ فوجی کارروائیاں رک گئی ہیں، لیکن سرحدی علاقوں اور اگلے مورچوں (Front line) پر بار بار جنگ بندی کی خلاف ورزیاں ہوئیں اور یہ سب تفصیلات روزانہ کی میڈیا رپورٹس اور دستاویزی رپورٹس (Documentaries) میں شائع ہوتی ہیں۔ ضیف الشامی نے سعودی اتحاد کے جنگ بندی کے غلط استعمال کے بارے میں یہ بھی کہا کہ دشمن اور قابضین انسانی ہمدردی کی بنا پر ہونے والی جنگ بندی کو اپنے اثر و رسوخ اور پائیداری کے لیے استعمال کر رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ جنگ بندی کے معاہدے کے مطابق صنعاء ہوائی اڈہ اور الحدیدہ بندرگاہ دوبارہ کھولے جانے تھے، لیکن عملی طور پر جو کچھ ہونا تھا اور جس کا ذکر کیا گیا، وہ نہیں ہوا۔ بندرگاہیں اور ہوائی اڈے نہیں کھولے گئے، تنخواہیں نہیں دی گئیں، بلکہ حالات مزید خراب ہوتے گئے اور یمنی وسائل کی لوٹ مار دن رات جاری ہے۔ اگر جنگ بندی کے اہداف حاصل نہ ہوئے تو جنگ بندی کا عمل طویل نہیں ہوگا۔ یاد رہے کہ یمنی جنگ بندی جو دو اپریل کو تنازعہ اور سات سالہ محاصرے کے خاتمے کی امید سے شروع ہوئی تھی، جارح اتحاد کی جانب سے بار بار خلاف ورزیوں کے بعد دو جون کو مزید دو ماہ کے لیے بڑھا دی گئی ہے۔