QR CodeQR Code

حالاتِ حاضرہ کے پیشِ نظر ایک رہبر کی ضرورت

16 Aug 2022 08:33

اسلام ٹائمز: اس دور میں اپنے امام (عج) کا انتظار کرنا ہے، مگر ایک بات ذہن نشین ہونی چاہیئے کہ انتظارِ امام (عج) کا مطلب فقط ہاتھ پر ہاتھ رکھ کر بیٹھنا نہیں ہے بلکہ اپنے عمل کو اس طرح بنانا ہے کہ ہم سب خود کو امام (عج) کی نصرت کے قابل بنا سکیں۔ ہماری زندگی کا ہدف وقت کے امام (عج) کے ظہور میں تعجیل کیلئے زمینہ سازی ہونا چاہیئے اور ہمیں کوئی بھی ایسا عمل انجام نہیں دینا چاہیئے کہ جو امام (عج) کے ظہور میں تاخیر کا باعث بنے۔ یہ دنیا جو اسوقت ظلم و بربریت سے پر ہوچکی ہے اور مظلوم ظلم کی چکی میں پس رہے ہیں، وہ سب ایک ہی فریاد کر رہے ہیں:
روداد اپنے غم کی سناتی ہے کائنات،
آخری حسین (ع) بلاتی ہے کائنات


تحریر: دخترِ مھدی (عج)

آجکل کے دور میں ہر طرف فتنہ، فساد، ظلم و جور اور قتل و غارت عروج پر ہے۔ ساری دنیائے اسلام مظالم سے بھری پڑی ہے۔ ہر طرف حق کو دبانے کی کوشش کی جا رہی ہے اور باطل قوتیں طاقت کے نشے میں مست ہوکر مظالم رواں رکھے ہوئے ہیں۔ اگر حالاتِ حاضرہ پر نظر دوڈائی جائے تو ہر طرف خانہ جنگی کی صورتحال سامنے آتی ہے۔ کہیں یمن، شام، عراق اور بحرین میں خون کی ہولی کھیلی جا رہی ہے تو کہیں کشمیر و فلسطین کے لوگوں پر مظالم ڈھا کر انہیں گھروں سے بے گھر کیا جا رہا ہے۔ ہر طرف نفسا نفسی کا عالم ہے اور لوگوں کی زندگیاں ویران ہوچکی ہیں۔ انسان جو کہ فطرتاً امن پسند ہے، اس قسم کی صورتحال سے کافی پریشان ہے، مگر انسانی دماغ دنیا کے حالات دیکھ کر یہ سوچنے پر مجبور ہے کہ ان سب حالات کے باوجود یہ نظامِ کائنات کیسے چل رہا ہے؟ کیا مظلوموں کے ساتھ انصاف ہوگا؟ اگر انصاف ہوگا تو کون کرے گا وہ انصاف۔؟ اس دنیا میں موجود ہر فرد کو کسی ایسے انسان کی تلاش ہے، جو اس دنیا کو عدل و انصاف سے بھر دے اور امن و سکون کا گہوارہ بنا دے۔
کسی کے آنے کی کرتی ہیں آرزو آنکھیں
کسی کو ڈھونڈتی رہتی ہیں چار سو آنکھیں