0
Thursday 14 Nov 2019 08:03

رسولِ اسلام، مرکز اتحاد

رسولِ اسلام، مرکز اتحاد
تحریر: عظمت علی
Rascov205@gmail.com
 
علمائے اہلسنت کا ماننا ہے کہ رسول اکرم کی ولادت 12 ربیع الاول کو ہوئی، جبکہ شیعہ علماء نے آنحضرت کی آمد  17 ربیع الاول کو تسلیم کی ہے۔ لیکن یہ کوئی اختلاف نہیں، اس سے کیا فرق پڑتا ہے کہ آپ نے کس روز روئے زمین پر آنکھیں کھولیں۔ ہمیں تو آپ کے کردار اور تعلیمات سے سروکار ہے۔ اس تاریخی ہیر پھیر کا کوئی مثبت نتیجہ نہیں۔ اسی لئے انقلاب ایرانی کے بانی آیت اللہ خمینی نے ان ایام کو "ہفتہ وحدت" کے عنوان سے منسوب کیا ہے تاکہ امت میں اختلاف نہ ہو۔ اگر تاریخ اسلام کا گہرائی سے مطالعہ کیا جائے تو رسول اعظم کی مکمل حیات "امۃ واحدۃ" کا کامل نمونہ ہے۔ آپ نے ہمیشہ لوگوں کو اختلاف سے دور رکھا۔ غیب کا علم رکھنے والے نبی کو بہت کچھ معلوم تھا، مگر آپ حالات کی نزاکت کے باعث ان سے چشم پوشی کرتے رہتے۔ اللہ کا ارشاد ہے:"قَالَتِ الۡاَعۡرَابُ اٰمَنَّا‌ ؕ قُلْ لَّمۡ تُؤۡمِنُوۡا وَلٰـكِنۡ قُوۡلُوۡۤا اَسۡلَمۡنَا وَلَمَّا يَدۡخُلِ الۡاِيۡمَانُ فِىۡ قُلُوۡبِكُمۡ‌" یہ بدو عرب کہتے ہیں کہ ہم ایمان لے آئے ہیں تو آپ کہہ دیجئے کہ تم ایمان نہیں لائے ہو بلکہ یہ کہو کہ اسلام لائے ہیں کہ ابھی ایمان تمہارے دلوں میں داخل نہیں ہوا ہے۔ (سورہ حجرات 14) آپ نے بناوٹی مسلمان کو بھی اپنی امت کا حصہ مانا ہے۔ فتح مکہ کے بعد  کچھ مشرکین نے بادل نخواستہ اسلام کا کلمہ پڑھ لیا، جبکہ دل میں شرک چھپا ہوا تھا مگر آپ نے ان کے حقوق کا بھی احترام کیا۔
 
دور پیغمبر میں نہ کوئی فرقہ تھا، ناہی کوئی گروہ، سب ایک تھے، ایک امت۔ ہاں!اتنا تو تاریخی مسلمات میں سے ہے کہ آنحضرت نے اس امت کو تہتر فرقوں میں بٹ جانے کی پیشین گوئی کردی تھی مگر حکم، یکجہتی کا تھا، آپسی اتحاد کا۔ نظریاتی اختلاف اپنی جگہ لیکن اسلام کے نام پر فرقہ بندی بالکل قابل قبول نہیں۔ آپ کے بعد آئمہ اور اصحاب کرام کا دور آتا ہے، ان کے درمیان بھی نظریاتی نامواقفت تھی مگر آج کی طرح تفرقہ نہ تھا۔ اگر ذہن میں یہ سوال امڈتا ہے کہ "وہ زمانہ اور تھا اور یہ زمانہ اور ہے"۔ سچ ہے کہ دونوں میں ایک طویل مدت کا فاصلہ ہے لیکن اختلاف سے کنارہ کشی ناممکن نہیں۔ ذرا چند لمحے فکر کریں کہ بہتری کس میں ہے...؟! ایک ہو کے رہنے میں یا الگ الگ....؟ قرآن نے اس کا جواب دیا ہے، "وَاعۡتَصِمُوۡا بِحَبۡلِ اللّٰهِ جَمِيۡعًا وَّلَا تَفَرَّقُوۡا‌"۔ اور اللہ کی رسّی کو مضبوطی سے پکڑے رہو اور آپس میں تفرقہ نہ پیدا کرو۔ (سورہ آل عمران 103) یہاں تو ہر قسم کی فصیل ٹوٹ جاتی ہے، وقت اور حالات سے بلند، تاابد کے لئے ایک ہی پیغام، مل جل کے رہو، تفرقہ پیدا مت کرو۔ اسی کتاب عظیم میں یہ بھی ارشاد ہے:"اِنَّمَا الۡمُؤۡمِنُوۡنَ اِخۡوَةٌ فَاَصۡلِحُوۡا بَيۡنَ اَخَوَيۡكُمۡ" مومنین آپس میں بالکل بھائی بھائی ہیں، لہٰذا اپنے بھائیوں کے درمیان اصلاح کرو۔ (سورہ حجرات 10)۔ اللہ  کا اردہ یہی ہے کہ ہم ایک ہوکر رہیں، ایک امت بن کر۔

عصر حاضر کے جید علماء کا بھی یہی فرمان ہے کہ ایک سے دو بھلے یعنی الگ الگ ٹکڑیوں میں بٹ جانے سے بہتر ہے کہ ہم ایک ہو جائیں، ایک قیادت کے ماتحت آجائیں، آخری رسول کی قیادت۔ اتحاد سے مراد کوئی یہ نہ سمجھے ہم تاریخی حقائق کو پس پشت ڈال دیں، حقیقت چھپ ہی نہیں سکتی لیکن اتنا ضرور دھیان رہے کہ"ھر سخن جایی و ھر نکته مقامی دارد" اور یہ طے کرنا ہر کس و ناکس کے بس میں نہیں۔ اب سوال یہ کہ کیا ممکن بھی ہے یا بس کہنے سننے کی باتیں ہیں۔ جی ہاں! ممکن ہے، مفید بھی ہے۔ سو فیصدی کا خیال تو ذہن سے نکال ہی دیں۔ آپ عالمی منظرنامہ پر نگاہ دوڑائیں، یہودی و عیسائی میں کتنی یکجہتی ہے، جبکہ ان کے سلسلے میں اللہ ارشاد فرما رہا ہے: "وَقَالَتِ الۡيَهُوۡدُ لَـيۡسَتِ النَّصٰرٰى عَلٰى شَىۡءٍ وَّقَالَتِ النَّصٰرٰى لَـيۡسَتِ الۡيَهُوۡدُ عَلٰى شَىۡءٍ" اور یہودی کہتے ہیں کہ نصاریٰ کا مذہب کچھ نہیں ہے اور نصاریٰ کہتے ہیں کہ یہودیوں کی کوئی بنیاد نہیں ہے۔ (سورہ بقرہ 113) یہودی اور عیسائی میں شدید مذہبی اختلاف ہے، مسلم دشمنی ہے، تاریخی حقائق ہیں کہ حضرت عیسٰی مسیح کے قتل میں یہودیوں کا ہاتھ شامل ہے لیکن آج آپ دیکھ لیں کہ زمانہ ہمارے خلاف کس طرح متحد ہوگیا ہے اور ہم ایک ہوکے بھی کتنے مختلف ہیں۔

امیرالمومنین علیہ السلام فرماتے ہیں: "فَيا عَجَبا! عَجَبا! وَاللّهِ يُميْتُ الْقَلْبَ وَيَجْلِبُ الْهَمَّ مِنْ اجْتِماعُ هؤلاءِ الْقَوِم عَلى باطِلِهِم وَتَفَـرُّقُـكُمْ عَن حَقِّـكُمْ"۔ تعجب ہے! حیرت انگیز بات ہے۔ خدا کی قسم! یہ بات دل کو موہ بنا دینے والی اور ہم و غم کو سمیٹنے والی ہے کہ یہ لوگ اپنے باطل پر مجتمع اور متحد ہیں اور تم اپنے حق پر بھی متحد نہیں ہو۔ (نہج البلاغہ خطبہ 27) ایک اللہ، ایک رسول، ایک کتاب اور ایک قبلہ کو تسلیم کرنے والے مسلمان جانے کس راہ کی اور بھٹک گئے ہیں کہ آج مسلمان، مسلمان کا سب سے بڑا دشمن بنا ہوا ہے۔ ہماری حرکات سے ہی دشمن نے فائدہ اٹھایا ہے، اگر ہم غداری پر آمادہ ہی نہ ہوتے تو اس کی اتنی مجال جو ہمارے گریبان تک پہونچ سکتا۔ لہٰذا__جو اس سنبھالنے کی شدید ضرورت ہے، جب جاگیں تبھی سویرا، اس لئے ابھی بھی وقت ہے اور وقت کی سب سے اہم ضرورت یکجہتی ہے اور رسول اکرم کی ذات ہمارے بہترین نمونہ ہے۔
 
خبر کا کوڈ : 827272
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش