0
Thursday 16 Oct 2014 19:12

متحدہ شیعہ محاذ

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

  • لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

    لاہور میں ہونے والی شیعہ قومی کانفرنس کے مناظر

اسلام ٹائمز۔ آج لاہور میں شاہ جہاں ہوٹل میں 40 سے زائد شیعہ جماعتوں کا اجلاس ہوا۔ اجلاس میں پاکستان بھر میں شیعہ نسل کشی کے واقعات اور پنجاب میں شیعیان حیدر کرار کے ساتھ ناروا سلوک پر شدید تحفظات کا اظہار کیا گیا۔ ان تمام جماعتوں پر مشتمل ایک غیر سیاسی اور پاکستان میں اہل تشیع کے حقوق کے تحفظ کے لئے فورم ’’متحدہ شیعہ محاذ‘‘ بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ سید شاکر حسین نقوی کو تمام جماعتوں کے اتفاق سے کنویئنر منتخب کر لیا گیا۔ اجلاس میں علامہ مشتاق جعفری، علامہ وقارالحسنین نقوی، سید شاکر حسین، سید خرم عباس نقوی، سید پیر نوبہار شاہ، الحاج حیدر علی مرزا، آغا زاہد حسین سمیت دیگر رہنماوُں نے شرکت کی۔ اجلاس میں محکمہ اوقاف پنجاب کی جانب سے اتحاد بین المسلمین کمیٹی پنجاب اور ضلعی مساجد کمیٹی میں اہل تشیع کی تعداد کو بریلوی اور دیوبندی مسالک کے مقابلے میں نصف کرنے پر شدید تشویش کا اظہار کیا گیا اور محکمہ اوقاف کے اس عمل کو اہل تشیع کو دوسرے درجے کا شہری قرار دینے کی سازش سے تعبیر کیا گیا۔
خبر کا کوڈ : 414958
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے