0
Friday 5 Aug 2022 23:59

پوری دنیا کے مظلومین ایک عادل حکمران اور ایک عادل امام کی تلاش میں ہیں، علامہ ناظر عباس تقوی

پوری دنیا کے مظلومین ایک عادل حکمران اور ایک عادل امام کی تلاش میں ہیں، علامہ ناظر عباس تقوی
اسلام ٹائمز۔ شیعہ علماء کونسل کے مرکزی رہنما علامہ سید ناظر عباس تقوی نے مسجد و امام بارگاہ عزاخانہ زہراؑ جامشورو میں عشرہ محرم کی چھٹی مجلس عزا سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ امام علی ابن ابی طالبؑ کا دور ہر حکمرانوں کے لئے ایک نمونہ عمل ہے، اگر آج ہم حق کے قیام کے لئے معاشرے میں کوشش کرنا چاہتے ہیں تو ہمیں امام علی ابن ابی طالبؑ کے راستے کو اپنانا ہوگا، آج جس طرح پوری دنیا میں مظلومین ظلم کی چکی میں پس رہے ہیں، امیر المومنینؑ نے اپنے دور خلافت میں ان مظلومین کا ہاتھ تھاما اور ان کی پشت پناہی کی۔ انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ آپ کے دور حکومت میں جو بنیادی چیز ہمیں نظر آتی ہیں وہ ہے معاشرے میں عدل و انصاف کا نظام، آج بھی کسی معاشرے میں ایٹم بم بنانا سائنسی ٹیکنالوجی کے میدان میں آگے بڑھ جانا کسی ترقی کا نام نہیں ہے بلکہ آج بھی کسی معاشرے کی ترقی کا معیار اس کے اخلاقیات اور عدل و انصاف کا قیام ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اگر معاشرے میں انصاف فراہم کرنے میں حکمران کامیاب ہوگئے تو ہمیں سمجھ لینا چاہیئے کہ معاشرہ ترقی کی راہوں پر گامزن ہے لیکن اگر معاشرے میں مظلوم کو اس کا حق نہیں دیا جا رہا تو پھر وہ معاشرہ ترقی یافتہ نہیں بلکہ تنزلی کی طرف جا رہا ہے، اس لئے امیرالمومنینؑ نے فرمایا کفر سے تو حکومت قائم رہ سکتی ہے مگر ظلم سے حکومت قائم نہیں رہ سکتی۔ انہوں نے مزید کہا کہ آج پوری دنیا کے مظلومین ایک عادل حکمران ایک عادل امام کی تلاش میں ہیں اور یہ اس وقت ممکن ہے، جب ہم معاشرے میں مل کر عدل و انصاف کے قیام کے لئے کوشش کریں اور اس حکومت الہیہ کے لئے اپنے معاشرے کو تیار کریں کہ جس کا انسان سے خدا نے وعدہ کیا ہے، وہ منجی بشریت وہ نجات دہندہ پیغمبرؐ کی اولاد میں سے ہے، جو امام مہدی علیہ السلام کی حکومت ہے اس حکومت کے لئے ہم سب کو مل کر جدوجہد کرنی چاہیئے تاکہ معاشرے میں ان مظلومین کو انصاف مہیا ہوسکے۔
خبر کا کوڈ : 1007808
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش