0
Sunday 18 Sep 2022 20:39

نوجوانوں کو روزگار کے مواقع تعلیمی قابلیت کے مطابق نہیں مل پاتے، ثناء بلوچ

نوجوانوں کو روزگار کے مواقع تعلیمی قابلیت کے مطابق نہیں مل پاتے، ثناء بلوچ
اسلام ٹائمز۔ بلوچستان نیشل پارٹی کے رہنماء ثناء بلوچ نے اپنے جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ بلوچستان جو ملک کے دیگر صوبوں کی نسبت زیادہ پسماندگی کا شکار ہے۔ سماجی ناہمواریاں، دہشت گردی، توانائی کا بحران، بنیادی انسانی حقوق کی شکستہ صورتحال، روزگار کے محدود مواقع اور ان کی غیر یقینی صورتحال، صوبے کے نوجوانوں کو مایوسی، احساس کمتری کا شکار بنا رہے ہیں، تو دوسری طرف بلوچستان کے گریجویٹ نوجوانوں کو جان بوجھ کر روزگار سے دور کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پہلے سے بلوچستان میں کارخانے انڈسٹریز کا نہ ہونا باڈرز کی بندش ایسے مسائل ہیں، جن کی وجہ سے بیروزگاری کی شرح بہت بلند ہے۔ اب دانستہ طور پر بلوچستان کے دور دراز اضلاع و علاقوں کے نوجوانوں کو صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں اہم صوبائی سطح کے اداروں میں روزگار کی نمائندگی سے دور رکھا جا رہا ہے۔

یونیورسٹیوں اور سیکرٹریٹ کے بعد اب صوبائی اسمبلی اور ہسپتال کے اہم شعبوں میں ڈویڑنل کوٹہ کو نظر انداز کرنا، انتہائی افسوس ناک رحجان ہے۔ انہوں نے کہا کہ جامعہ بلوچستان سے ہر سال ہزاروں کے حساب سے طلبہ گریجویشن کی ڈگری حاصل کرتے ہیں۔ حکومت کی جانب سے تو سال بھر میں 300 ملازمتیں بھی تشہیر نہیں ہوتیں۔ یہاں بلوچستان حکومت کے ساتھ گریجویٹس کے لیے بلوچستان پبلک سروس کمیشن اور وفاق میں بھی محدود کوٹہ ہے۔ جس کی وجہ سے نوجوانوں کو روزگار کے مواقع تعلیمی قابلیت کے مطابق نہیں مل پاتے۔ قابل غور بات یہ بھی ہے کہ ان نوجوانوں کے مستقبل کا کیا ہوگا؟ جن پر والدین نے زندگی کی جمع پونچی خرچ کرکے اعلیٰ تعلیم دلائی اور ڈگریاں حاصل کرنے کے بعد بھی بے روزگاری کی تکلیف دہ مثال بنے نظر آتے ہیں۔ صوبائی حکومت کو بلوچستان میں بے روزگاری کے خاتمے اور گریجویٹ نوجوانوں کی مایوسی اور محرومی کو دور کرنے لیے سنجیدہ اقدامات کی ضرورت ہے۔
خبر کا کوڈ : 1015014
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش