0
Tuesday 22 Nov 2022 21:56

فردو جوہری مرکز میں 60 فیصد افزودگی کا ازسرنو آغاز

فردو جوہری مرکز میں 60 فیصد افزودگی کا ازسرنو آغاز
اسلام ٹائمز۔ ایرانی جوہری توانائی تنظیم کے سربراہ نے عالمی جوہری توانائی ایجنسی کے بورڈ آف گورنرز میں ایران کے خلاف منظور ہونے والی جھوٹی قرارداد پر ایرانی جوابی اقدام کی تائید کی ہے۔ تفصیلات کے مطابق ایرانی ماحولیاتی تحفظ تنظیم کے سربراہ علی سلاجقہ کے ہمراہ تہران میں بیسویں عالمی ماحولیاتی تحفظ کی نمائش کا دورہ کرتے ہوئے میڈیا کے ساتھ گفتگو میں ایرانی جوہری توانائی تنظیم کے سربراہ اور نائب ایرانی صدر محمد اسلامی نے فردو و نطنز کے جوہری مراکز میں انجام پانے والے ایرانی جوابی اقدامات پر روشنی ڈالی اور اعلان کرتے ہوئے کہا کہ حالیہ ايام میں ایران کے خلاف ایک جھوٹی قرارداد منظور کی گئی تھی جس کے جواب میں ایران نے فردو میں 60 فیصد افزودہ UF6 یورینیم کی پیداوار کا از سر نو آغاز کر دیا ہے۔

اس موقع پر ایرانی جوہری توانائی تنظیم کے سربراہ نے ماحولیاتی تحفظ پر مبنی نمائش کو سراہتے ہوئے تاکید کی کہ دنیا بھر میں سال 2050ء تک کاربن کی پیداوار کو صفر کرنے کے کا ہدف متعین کیا گیا ہے اور امید ہے کہ جاری قومی کوششوں کے نتیجے میں تب تک ہم اپنے ملک میں کاربن کی پیداوار کو صفر تک پہنچا دیں گے اور اس مقصد کے جلد از جلد حصول کے لئے ایرانی جوہری توانائی تنظیم بھی اپنی ٹیکنالوجیز کو 2 شعبوں میں مزید توسیع دے گی۔ انہوں نے کہا کہ ان امور میں سے ایک جوہری ٹیکنالوجی کے ذریعے بجلی کی پیداوار ہے درحالیکہ حکومت اس وقت سستی توانائی و ایندھن کی فراہمی کی جانب تیزی کے ساتھ قدم بڑھا رہی ہے جبکہ سال 2050ء کے ہدف کے حصول کے حوالے سے جوہری بجلی گھروں کی توسیع بھی تیزی کے ساتھ جاری ہے۔

واضح رہے کہ ایرانی دارالحکومت تہران میں ماحولیاتی تحفظ کی 3 روزہ بیسویں سالانہ نمائش 20 نومبر سے جاری ہے جس میں اس حوالے سے تیار کردہ دوسری ایرانی محصولات کے ساتھ ساتھ جوہری ٹیکنالوجی کے میدان میں ایران کی تازہ ترین محصولات کو بھی نمائش میں رکھا گیا ہے۔
خبر کا کوڈ : 1026233
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش