0
Sunday 13 Sep 2015 20:14

پیپلز پارٹی کا نواز لیگ کیخلاف سیاسی اتحاد بنانے کا فیصلہ

پیپلز پارٹی کا نواز لیگ کیخلاف سیاسی اتحاد بنانے کا فیصلہ
اسلام ٹائمز۔ حکمران مسلم لیگ نواز کی وفاقی حکومت کو آنے والے دنوں میں بڑے سیاسی بحرانوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے، کیونکہ ملک کی اہم جماعتیں پیپلز پارٹی، تحریک انصاف اور متحدہ قومی موومنٹ حکمران مسلم لیگ سے خائف نظر آ رہی ہیں، اور اسی لئے آنے والے دنوں میں نواز حکومت کے خلاف ایک بڑا سیاسی الائنس قائم ہونے جا رہا ہے۔ تفصیلات کے مطابق پیپلز پارٹی کی قیادت نے نواز حکومت مخالف سیاسی الائنس کی تشکیل کیلئے فیصلہ کر لیا ہے، اور اس حوالے سے آئندہ دنوں میں پیپلز پارٹی بڑے سیاسی رابطوں کا آغاز کرنے جا رہی ہے، اس پالیسی کی حتمی منظوری بلاول بھٹو زرداری اور آصف علی زرداری دیں گے، پیپلز پارٹی نے پنجاب میں حکمران مسلم لیگ کے خلاف بلدیاتی انتخابات میں جارحانہ انداز میں عوامی رابطہ مہم چلانے کا بھی فیصلہ کیا ہے، اور عوام دشمن پالیسیوں کو اجاگر کیا جائیگا، پنجاب میں بڑے عوامی جلسوں سے بلاول بھٹو زرداری براہ راست یا وڈیو لنک پر خطاب کریں گے۔

وزیراعلٰی سندھ سید قائم علی شاہ کی وزیراعظم نواز شریف سے ہونے والی 2 مرتبہ ملاقات اور تحفظات کا اظہار کرنے کے باوجود، نواز حکومت نے اب تک ان کے ازالے کیلئے کوئی سنجیدہ اقدامات نہیں کئے ہیں، اسی وجہ سے پیپلز پارٹی کی قیادت نے حکمران نواز لیگ کے خلاف اب تک بیانات کی حد تک جارحانہ پالیسی اختیار کی ہے۔ دوسری جانب حکمران مسلم لیگ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ پیپلز پارٹی کے ساتھ تعلقات کی بہتری کیلئے کوششیں کی جا رہی ہیں، اور اس حوالے سے وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی جانب سے جمعیت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان، عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ اسفند یار ولی اور جماعت اسلامی کے مرکزی امیر سراج الحق کے توسط سے پیپلز پارٹی کی قیادت سے ایک مرتبہ پھر رابطہ کیا جائے گا، اور ان کے تحفظات دور کرنے کی یقین دہانی کرائی جائے گی۔ حکمران مسلم لیگ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ پیپلز پارٹی اگر جارحانہ سیاسی پالیسی کو اختیار کرے گی، تو نواز لیگ پھر بھی مفاہمتی پالیسی کے تحت سیاسی معاملات کی بہتری کیلئے سیاسی جماعتوں سے رابطے کرتی رہے گی۔
خبر کا کوڈ : 485420
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے