0
Sunday 21 May 2017 22:19
جب تک ایرانی حکومت امن کیلئے ساتھ دینے پر رضامند نہیں ہوتی، تمام ممالک ملکر اسے عالمی تنہائی کا شکار کرنے میں کردار ادا کریں

ڈونلڈ ٹرمپ کا ایران پر فرقہ وارانہ فسادات اور دہشتگردی کیلئے ایندھن فراہم کرنیکا الزام

ہم ایسا اتحاد تشکیل دینا چاہتے ہیں جس سے ہمارا مستقبل محفوظ رہے، خلیج ممالک کیساتھ انتہاء پسندی کے خاتمے کے معاہدے کرنیکا اعلان
ڈونلڈ ٹرمپ کا ایران پر فرقہ وارانہ فسادات اور دہشتگردی کیلئے ایندھن فراہم کرنیکا الزام
اسلام ٹائمز۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سعودی عرب میں ہونے والی پہلی امریکہ عرب اسلامی سربراہ کانفرنس میں مسلمان رہنماؤں پر مذہب کے نام پر تشدد کے خلاف اتحاد پر زور دیتے ہوئے کہا انتہاء پسندی کے خلاف جنگ دراصل نیکی اور بدی کی جنگ ہے۔ اپنی اہم ترین تقریر میں ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک بار پھر ایران پر حملہ کرتے ہوئے کہا الزام عائد کیا کہ تہران فرقہ وارانہ فسادات اور دہشت گردی کے لئے ایندھن فراہم کر رہا ہے۔ امریکی صدر نے اسلامی ممالک کے سربراہوں کے سامنے ایران کو عالمی تنہائی کا شکار کرنے کی بات بھی کی۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے درجنوں عرب و مسلم ممالک کے سربراہوں کو کہا کہ وہ امن، محبت اور امید کا پیغام لے کر آئے ہیں، وقت آچکا ہے کہ ہم ہر طرح کی انتہاء پسندی کے خاتمہ کیلئے ایمانداری سے آگے بڑھیں۔ مسلمان ممالک کے شہریوں پر امریکہ آمد پر پابندی عائد کرنے جیسے متنازع فیصلہ کرنے والے ڈونلڈ ٹرمپ نے دہشت گرد ی کے خلاف جنگ کو تہذیبوں کے درمیان جنگ کے بجائے اچھے اور برے کے درمیان جنگ قرار دیا۔ خیال رہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ اپنے پہلے غیر ملکی دورے پر 20 مئی کو سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض پہنچے، 21 مئی کو انہوں نے پہلی عرب امریکہ اسلامی سربراہ کانفرسس سے خطاب کیا۔ ڈونلڈ ٹرمپ سعودی عرب کے بعد اسرائیل اور فلسطین سمیت یورپی ممالک کے دورے پر جائیں گے۔ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ایران مخالف خطاب کو سابق امریکی صدر براک اوباما کے سعودی تعلقات کے مقابلے میں زیادہ سخت دیکھا جا رہا ہے، خیال کیا جا رہا ہے کہ براک اوباما ایران مخالف بیانات دینے کے بجائے سعودی عرب کو ہدایات دیتے رہتے تھے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے "اے ایف پی" کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے خطاب میں مزید کہا کہ لبنان سے لے کر عراق اور یمن تک ایران نہ صرف دہشت گردی کے لئے فنڈز فراہم کر رہا ہے، بلکہ وہ دہشت گردوں کی تربیت کرنے سمیت انہیں اسلحہ بھی فراہم کر رہا ہے۔ امریکی صدر نے الزام عائد کیا کہ ایران خطے میں افراتفری پھیلانے اور عدم استحکام لانے کے لئے انتہاء پسند گروپ بنا رہا ہے۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے مسلمان ممالک کو اپیل کرتے ہوئے کہا کہ جب تک ایرانی حکومت امن کے لئے ساتھ دینے پر رضامند نہیں ہوتی، تب تک تمام ممالک مل کر اسے عالمی تنہائی کا شکار کرنے میں کردار ادا کریں۔ اس موقع پر امریکی صدر نے خلیج ممالک کے ساتھ انتہاء پسندی کے خاتمے کے معاہدے کرنے کا اعلان بھی کیا۔ اپنے خطاب میں ان کا کہنا تھا کہ اسلام دہشت گردی کا حمایتی نہیں ہے اور امریکہ ابھرتے خطرات سے نمٹنے کے لئے پرعزم ہے۔ ڈونلڈ ٹرمپ کا اپنے خطاب میں کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف یہ جنگ سفاک مجرموں اور تمام مذاہب کے مہذب افراد کے درمیان ہے، سفاک مجرم معصوم لوگوں کو قتل اور مہذب ان کی حفاظت چاہتے ہیں۔ امریکی صدر کا کہنا تھا کہ امریکہ جنگ نہیں بلکہ امن چاہتا ہے، سعودی عرب دنیا کے بڑے مذہب کی مقدس سرزمین ہے اور نئے مستقبل کے آغاز سے پہلے دہشت گردوں کو اپنے علاقوں سے ختم کرنا ہوگا۔

امریکی صدر کا کہنا تھا کہ دنیا میں امن کے لئے دہشت گردی کا خاتمہ ضروری ہے اور ہم سب کے ملنے کا مقصد یہ ہے کہ ہم بے گناہ مسلمانوں کے قاتلوں کے خلاف متحد ہیں۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ اپنا طرز زندگی کسی کے اوپر مسلط نہیں کرنا چاہتا اور نہ ہی ہم یہاں یہ بتانے آئے ہیں کہ کس کو کس طرح زندگی گزارنی چاہئیے، بلکہ ہم ایسا اتحاد تشکیل دینا چاہتے ہیں جس سے ہمارا مستقبل محفوظ رہے۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے خطاب میں امریکہ اور سعودی عرب کے درمیان تاریخی تعلقات کی بات کرتے ہوئے کہا کہ سعودی عرب کے ساتھ معاہدوں سے کئی لوگوں کو ملازمتیں ملیں گی، جبکہ دونوں ممالک کے تعلقات بڑی اہمیت کے حامل ہیں۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے سعودی فرماں روا کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ شاہ سلمان بن عبد العزیز نے سعودی عرب اور دیگر مسلمانوں کو متحد کیا، وہ یہاں امریکی عوام کی طرف سے محبت کا پیغام لے کر پہنچے ہیں، بہترین میزبانی پر سعودی فرماں روا کا شکرگزار ہوں۔ خیال رہے کہ پہلی عرب امریکہ اسلامی سربراہ کانفرنس میں 35 مختلف مسلمان ریاستوں اور حکومتوں کے سربراہ شامل ہوئے، ان میں سے اکثریت ان ممالک کی تھے، جنہیں سعودی عرب کا قریبی دوست سمجھا جاتا ہے۔

ڈونلڈ ٹرمپ کے خطاب سے قبل عرب امریکہ اسلامی کانفرنس کے آغاز میں سعودی فرماں رواں نے خطاب کرتے ہوئے امریکی صدر اور دیگر مہمانوں کو خوش آمدید کہتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ہم سب ایک پیج پر ہیں۔ شاہ سلمان بن عبدالعزیز کا کہنا تھا کہ دہشت گردی پوری دنیا کے لئے خطرہ بن چکی ہے، جبکہ اسلام میں ایک مسلمان کا قتل پوری انسانیت کا قتل ہے، اس لئے ہم سب کا اس حوالے سے ایک ہی خیال ہے۔ سعودی فرماں رواں کا مزید کہنا تھا کہ یہ اجلاس امریکہ اور مسلمان ممالک کے درمیان بہت اہم ہے، ڈیڑھ ارب مسلمان دہشت گردی کے خلاف امریکہ کے اتحادی ہیں اور ہمیں دنیا میں امن و استحکام کے لئے مشترکہ کوششیں کرنی چاہئیے۔ خبر رساں ادارے کے مطابق کانفرنس کے موقع پر ڈونلڈ ٹرمپ اور مصری صدر فتح السیسی کے درمیان ہوٹل میں ملاقات ہوئی، جس میں دونوں رہنماؤں کے درمیان دلچسپ مصافحہ بھی ہوا۔ ملاقات کے دوران امریکی صدر نے جلد مصری دورے کی خواہش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مصر ان کے غیر ملکی دوروں کی فہرست میں شامل ہے۔ اس موقع پر ڈونلڈ ٹرمپ نے مصری صدر کو اپنا دوست کہا، جبکہ فتح السیسی نے ڈونلڈ ٹرمپ کی شخصیت کو منفرد قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ ناممکن کو ممکن بنانے کی اہلیت رکھتے ہیں، جس پر ٹرمپ نے ان سے اتفاق کرتے ہوئے مصری صدر کی تعریف کی۔ امریکی صدر سعودی عرب کے بعد سیدھا اسرائیل پہنچیں گے، جس کے بعد وہ فلسطین بھی جائیں گے، ڈونلڈ ٹرمپ ویٹی کن سٹی کے دورے سمیت برسلز اور اٹلی کا دورہ بھی کریں گے، جہاں وہ نیٹو جی 7 ممالک کے اجلاسوں میں شرکت کریں گے۔
خبر کا کوڈ : 639094
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب