0
Monday 18 Sep 2017 11:23
جامع ایٹمی معاہدہ خطے اور دنیا کی تاریخ میں ہمیشہ باقی رہیگا

جب تک فریق مقابل عہد کا پابند ہے، ایران بھی اپنے عہد کی پابندی کرتا رہیگا، ڈاکٹر حسن روحانی

ایرانی قوم کے حقوق کو پامال کرنیوالوں کو مناسب اور بھرپور انداز میں جواب دیا جائیگا
جب تک فریق مقابل عہد کا پابند ہے، ایران بھی اپنے عہد کی پابندی کرتا رہیگا، ڈاکٹر حسن روحانی
اسلام ٹائمز۔ اسلامی جمہوری ایران کے صدر ڈاکٹر حسن روحانی نے کہا ہے کہ ایران عالمی معاہدے توڑنے میں کبھی پہل نہیں کرے گا لیکن اگر مقابل فریق نے ایرانی عوام کے حقوق پامال کرنے کی کوشش کی تو تہران بھی اس کا راست اور متناسب جواب دے گا۔ امریکہ میں مقیم ایرانی شہریوں اور دانشوروں کی جانب سے اپنے اعزاز میں دیئے جانے والے عشائیے سے خطاب کرتے ہوئے ایرانی صدر نے کہا کہ جامع ایٹمی معاہدہ خطے اور دنیا کی تاریخ میں ہمیشہ باقی رہے گا۔ ایرانی صدر کا کہنا تھا کہ تاریخ اس بات کی گواہ ہے کہ ایرانیوں نے ہمیشہ اپنے وعدوں کی پاسداری کی ہے اور جب تک فریق مقابل عہد کا پابند ہے، ایران بھی اپنے عہد کی پابندی کرتا رہے گا۔ ڈاکٹر حسن روحانی نے جوہری معاہدے کی خلاف ورزی کرنے والوں کو متنبہ کرتے ہوئے کہا کہ ایرانی قوم کے حقوق کو پامال کرنے والوں کو مناسب اور بھرپور انداز میں جواب دیا جائے گا۔ ایرانی صدر نے کہا کہ جوہری معاہدہ چند فریقی معاہدہ ہے، جس کی اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے توثیق کی ہے۔ انہوں نے کہا جوہری معاہدے سے نکلنے کا مطلب یہ ہے کہ کوئی حکومت کسی واضح سیاسی معاہدے کو پامال کر دے اور یہ کوئی قابل فخر بات نہیں ہے۔ انہوں نے انیس مئی دو ہزار سترہ کے انتخابات میں ایرانی عوام کی بھرپور شرکت کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ انتخابات میں ایرانی عوامی کی بھرپور شرکت نے ثابت کر دیا ہے کہ ایرانی قوم، زندہ قوم  ہے اور اسے اپنے ملک کے مستقبل سے گہری دلچسپی ہے۔ ڈاکٹر حسن روحانی نے کہا کہ ان کی تقریب حلف برداری میں دنیا کے ایک سو پانچ ممالک کے رہنما اور اعلٰی حکام کی شرکت سے یہ بات ظاہر ہوتی ہے کہ عالمی برادری ایرانی قوم، انتخابات اور عوامی مینڈیٹ کا احترام کرتی ہے۔

قبل ازیں اتوار کی شام نیویارک کے جان ایف کینیڈی ایئر پورٹ پہنچنے کے فوراً بعد صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے ایرانی صدر نے کہا تھا کہ جیسا کہ رہبر انقلاب اسلامی نے فرمایا ہے کہ ایران دنیا کے ساتھ وسیع تعاون کی اسٹریٹیجی پر عمل پیرا ہے اور عالمی فورموں پر اس اسٹریٹیجی پر آسانی کے ساتھ عمل کیا جاسکتا ہے۔ ڈاکٹر حسن روحانی کا کہنا تھا کہ وہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کرکے ایران کی عظیم قوم کی آواز دنیا والوں کے کانوں تک پہنچائیں گے۔ ایرانی صدر نے کہا کہ آج عالم اسلام کے سامنے بہت سی مشکلات ہیں، جن میں میانمار کے مظلوم روہنگیا مسلمانوں کا معاملہ سب سے اہم ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ جنرل اسمبلی کے اجلاس سے خطاب کرکے، اہم ترین علاقائی اور بین الاقوامی مسائل اور خاص طور سے روہنگیا مسلمانوں کے حوالے سے اسلامی جمہوریہ ایران کے موقف کو کھل کر بیان کریں گے۔ ڈاکٹر حسن روحانی جنرل اسمبلی سے خطاب کے علاوہ بعض ملکوں کے سربراہوں سے ملاقات اور اہم ترین علاقائی اور عالمی مسائل نیز دوطرفہ تعلقات کے بارے میں تبادلہ خیال کریں گے۔ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کا 72واں اجلاس انیس ستمبر کو شروع ہوگا اور پچیس ستمبر تک جاری رہے گا۔ ڈاکٹر حسن روحانی بیس ستمبر کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کریں گے۔
خبر کا کوڈ : 670066
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب