0
Tuesday 27 Mar 2018 00:01

62 سال کی پاکستانی ماں کو امریکا چھوڑ دینے کے احکامات، مشی گن کے ایک چرچ کا انہیں پناہ دینے کا اعلان

62 سال کی پاکستانی ماں کو امریکا چھوڑ دینے کے احکامات، مشی گن کے ایک چرچ کا انہیں پناہ دینے کا اعلان
اسلام ٹائمز۔ 13 سال سے امریکا میں رہائش پذیر پاکستانی خاتون ملک بدری کے احکامات کے بعد چرچ میں رہنے پر مجبور ہوگئیں۔ 62 سال کی پاکستانی ماں کو امریکا چھوڑ دینے کے احکامات ملے تھے، جس کے بعد مشی گن کے ایک چرچ نے انہیں پناہ دینے کا اعلان کیا تھا۔ بزرگ پاکستانی خاتون شاہدہ نعیم 12 مارچ سے چرچ میں مقیم ہیں۔ شاہدہ نعیم 40 سال پہلے پاکستان سے کویت منتقل ہوئی تھیں جہاں وہ گھروں میں کام کرتی تھی، تاہم تیرہ سال پہلے وہ نان امیگرینٹ ویزے پر امریکا آئی تھیں۔ اب انہیں امریکا چھوڑنے کا حکم دیا جاچکا ہے اور وہ مشی گن کے چرچ میں پناہ گزین ہیں۔ مشی گن میں واقع چرچ ان سیکڑوں گرجا گھروں میں سے ایک ہے، جو ملک بدری کے احکامات کا سامنا کرنے والے افراد کو پناہ دیتا ہے۔ کالامازو کے فرسٹ کانگریگیشنل چرچ کے ایک عہدے دار نے بتایا کہ پاکستانی خاتون نے چرچ میں پناہ لی ہوئی ہے کیوںکہ انہیں ملک بدری کا سامنا ہے۔ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شاہدہ نعیم نے کہا کہ امیگریشن حکام نے مجھے پاکستان واپس جانے کا کہا لیکن میں چرچ آگئی۔ انہوں نے مزید کہا کہ میں پاکستان واپس نہیں جاسکتی، میرا خاندان، میرا بیٹا یہاں ہے، میں نے اپنی بیٹی کو یہاں کھو دیا، اس نے یہیں تعلیم حاصل کی اور یہیں اس کا انتقال ہوا، میں ہر روز اس کی قبر پر جاتی ہوں، لیکن جب سے میں چرچ میں آئی ہوں قبر پر نہیں جاسکی۔ 62 سالہ شاہدہ نے کہا کہ میں اپنی بیٹی کو نہیں دیکھ سکتی اور اب اس کی قبر پر جانے سے بھی مجھے محروم کردیا گیا ہے، میری خواہش ہے کہ مجھے اس کے برابر میں دفن کیا جائے۔ چرچ حکام کا کہنا ہے کہ وہ دیگر افراد کی طرح شاہدہ نعیم کے معاملے میں بھی قانونی ماہرین اور ان سیاستدانوں سے رابطے میں ہیں جو اس کام میں ان کی حمایت کرتے ہیں تاکہ کوئی قانونی راستہ نکالا جاسکے۔
خبر کا کوڈ : 714082
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب