0
Wednesday 12 Sep 2018 23:54

کراچی میں 10 ہزار خفیہ کیمرے لگانے کا منصوبہ تعطل کا شکار

کراچی میں 10 ہزار خفیہ کیمرے لگانے کا منصوبہ تعطل کا شکار
اسلام ٹائمز۔ ملک کے معاشی حب اور دنیا کے دس بڑے شہروں میں شامل کراچی میں سی سی ٹی وی کیمروں کا جال بچھانے کے منصوبے پر عملدرآمد سست روی کا شکار ہے۔ تفصیلات کے مطابق کراچی میں جرائم پیشہ افراد پر کڑی نگاہ رکھنے اور شہر کے چپے چپے کی نگرانی کیلئے سندھ پولیس کے تحت شہر بھر کے منتخب مقامات پر 10 ہزار کلوز سرکٹ ٹی وی کیمرے (سی سی ٹی وی کیمرے) نصب کرنے کا منصوبہ بنایا گیا تھا، منصوبے کا آغاز اگست 2017ء میں کیا گیا، جس کا تخمینہ 10 ارب تھا، اس سلسلے میں مختلف اداروں سے مشاورت کی گئی، کیمروں کی تنصیب کے مقامات کا تعین کیا گیا۔ منصوبے کے تحت جدید ٹیکنالوجی کے حامل 10 سے 12 میگا پکسل کے متحرک (موونگ) اور اسٹل (نان موونگ) کیمرے لگائے جانے تھے، شہر کا بیشتر علاقہ خصوصاً ضلع غربی کی بھی کیمروں کے ذریعے نگرانی کرنا تھی۔

ضلع غربی میں انتہائی کم مقامات پر کیمرے لگے ہوئے ہیں، اسے بھی 100 فیصد کیمروں سے کور کرنا تھا، لیکن ایک برس گزرنے کے بعد بھی اس منصوبے پر عملدرآمد انتہائی سست روی کا شکار ہے، جس کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ منصوبے کا اب تک پی سی ون بھی تیار نہیں ہو سکا ہے، اس کے ساتھ پہلے سے نصب 2 ہزار کیمرے بھی انہی 10 ہزار کیمروں کے ساتھ منسلک کرنا تھے۔ اس منصوبے کا مقصد شہر بھر میں جرائم پیشہ عناصر پر کڑی نگاہ رکھنا تھا، اس کے ساتھ اگر کہیں کوئی واردات ہو بھی جائے، تو ملزمان کو کیمروں کے ذریعے پکڑنا، ان کی نشاندہی کرنا یا ان کی موٹرسائیکل و گاڑی کی رجسٹریشن نمبر کے ذریعے انہیں قانون کے کٹہرے میں لانا تھا، لیکن ایک برس بعد بھی اس منصوبے پر کوئی ٹھوس پیش رفت نہ ہو سکی۔

اس سلسلے میں سندھ پولیس کی ڈائریکٹر آئی ٹی تبسم عابد نے بتایا کہ ابتدا میں منصوبہ کچھ مسائل کا شکار تھا، جس کے بعد محکمہ داخلہ سندھ نے کمیٹی قائم کی، جس میں تمام اداروں کے نمائندے شامل تھے، طویل بحث اور مشاورت کے بعد کیمروں کی تنصیب کے مقامات کا انتخاب کیا گیا، اب جلد ہی کنسلٹنسی مکمل کرکے پروجیکٹ ڈائریکٹر کی تعیناتی عمل میں لائی جائے گی۔ منصوبے کے سلسلے میں جیو ٹیگنگ مکمل کرلی گئی ہے، منصوبے کے تحت 4 عمارتیں تعمیر کی جائیں گی، جو کہ ہر ضلع کے ہیڈکوارٹرز ہوں گے اور وہ سینٹرل پولیس آفس میں قائم ہیڈ کوارٹر سے منسلک ہوںگے، عمارتیں سینٹرل پولیس آفس، نیوٹائون تھانہ، گارڈن ہیڈکوارٹرز اور ساؤتھ ہیڈ کوارٹرز میں بنائی جائیں گی۔ منصوبے کا پی سی ون حتمی مراحل میں ہے، جسے جلد مکمل کرلیا جائے گا، سندھ پولیس نے عمارتوں کی ڈیزائننگ بھی مکمل کرلی ہے اور جلد ہی مانیٹرنگ روم قائم کر دیا جائے گا، جس کے بعد کیمروں اور سامان کی خریداری کیلئے سندھ حکومت کی جانب سے ٹینڈر جاری کیا جائے گا۔
خبر کا کوڈ : 749715
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے