0
Sunday 17 Feb 2019 22:10
محمد بن سلمان سینکڑوں سلفی علماء کا قاتل ہے

سعودی ولی عہد کا استقبال کرکے قوم کی توہین کی گئی، قاضی عبدالقدیر خاموش

ایک جابر اور آمر شخص کا کرفیو لگا کر استقبال کیا گیا ہے
سعودی ولی عہد کا استقبال کرکے قوم کی توہین کی گئی، قاضی عبدالقدیر خاموش
اسلام ٹائمز۔ جمعیت علماء اہلحدیث پاکستان کے سربراہ قاضی عبدالقدیر خاموش نے کہا ہے کہ خونخوار سعودی شہزادے کا استقبال کرکے جمہوری قوم کی توہین کی گئی ہے، محمد بن سلمان سینکڑوں سلفی علماء کا قاتل ہے جبکہ سینکڑوں اب بھی جیل میں قید تنہائی گزار رہے ہیں، جس کے دل میں مسلک اہلحدیث کی محبت ہے، وہ اس کے استقبال کیلئے نہیں گیا، عوام اور اہلحدیث نوجوانوں نے بھی استقبال کو مسترد کر دیا ہے۔ استقبال صرف چندہ خور مولویوں نے کیا۔ لاہور سے جاری اپنے ایک بیان میں قاضی عبدالقدیر خاموش نے کہا کہ ایک جابر اور آمر شخص کا کرفیو لگا کر استقبال کیا گیا ہے، جس نے مقدس سرزمین سعودی عرب پر آمریت نافذ کر رکھی ہے۔ ایسے شخص کے شاہانہ استقبال کی آئین اجازت دیتا ہے اور نہ ہی اخلاق۔

قاضی عبدالقدیر خاموش نے مطالبہ کیا کہ اسلام آباد اور راولپبنڈی میں کرفیو نافذ ہے، لوگوں کی راہ میں رکاو ٹیں ہٹائی جائیں، الیکٹرانک، پرنٹ اور سوشل میڈیا پر عائد پابندیوں کو بھی ختم کیا جائے اور عوام کو یہ بھی بتایا جائے کہ سعودی شہزادے کے ساتھ ہونیوالے معاہدوں کے عوض قوم کا کیا کچھ گروی رکھا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان آرمی کی سعودی عرب میں موجودگی صرف حرمین شریفین کے تحفظ کیلئے ہی ہونی چاہیئے، اسے کسی پڑوسی ملک پر چڑھائی اور اس کے اندرونی معاملات میں مداخلت کیلئے استعمال نہ کیا جائے۔ قاضی عبدالقدیر خاموش نے کہا کہ وہ سلفی عقیدے سے تعلق رکھنے والے جمہوریت پسند ہیں، سعودی عرب میں جس انداز سے آل سعود کی خاندانی حکومت قائم ہے، اس کی بنیادی انسانی حقوق اجازت دیتے ہیں اور نہ ہی اسلام، محمد بن سلمان سعودی صحافی خاشقجی کے قتل میں ملوث ہے، ایسے شخص کا پاکستان میں استقبال شرمناک ہے۔
خبر کا کوڈ : 778566
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب