0
Thursday 11 Apr 2019 12:44

لاہور ہائیکورٹ: گوگل پر تحریف شدہ قرآن مجید اپ لوڈ کرنے کا کیس سامنے آ گیا

لاہور ہائیکورٹ: گوگل پر تحریف شدہ قرآن مجید اپ لوڈ کرنے کا کیس سامنے آ گیا
اسلام ٹائمز۔ لاہور ہائیکورٹ نے گوگل پلے سٹور پر قادیانی کمیونٹی کی جانب سے قرآن پاک اپ لوڈ کرنے کیخلاف دائر درخواست پر ڈائریکٹر جنرل پاکستان ٹیلی کمیونی کمیشن اتھارٹی کو نوٹس جاری کرتے ہوئے متعلقہ ریکارڈ سمیت طلب کر لیا ہے۔ جسٹس قاسم خان نے شہری بلال ریاض شیخ کی درخواست پر سماعت کی جس میں وزارت داخلہ، ڈی جی ایف آئی اے اور ڈائریکٹر سائبر کرائم سرکل کو فریق بنایا گیا ہے۔

درخواستگزار وکیل نے موقف اختیار کیا کہ اللہ نے قرآن پاک میں واضح طور پر حکم دیا ہے کہ حضرت محمد آخری نبی ہیں اور تمام مسلمانوں کا ایمان ہے کہ حضرت محمد (ص) کے بعد کوئی نبی نہیں، لیکن گوگل پلے سٹور پر احمدی کمیونٹی کا اپ لوڈ کیا گیا قرآن پاک ترمیم شدہ ہے جس سے مسلمانوں کو گمراہ کرنے کیلئے ترمیمی قرآن گوگل پلے سٹور پر اپ لوڈ کیا ہے۔

درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ اس حوالے سے ایف آئی اے کو مذکورہ قرآن پاک گوگل پلے سٹور سے ہٹانے کی درخواست دے رکھی ہے، بے حرمتی پر حکومتی ادارے اور پاکستان ٹیلی کمیونی کیشن اتھارٹی خاموش ہیں۔ درخواستگزار نے عدالت سے استدعا کی کہ عدالت ان خود ساختہ ویب سائٹس اور شوشل میڈیا کو بلاک کرنے کا حکم دے کر گوگل پلے سٹور سے احمدیہ کمیونٹی کا اَپ لوڈ کیا گیا قرآن ہٹانے کی ہدایت کرے، نہ ہٹانے والوں کیخلاف کارروائی کا بھی حکم دیا جائے۔
 
خبر کا کوڈ : 788114
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے