0
Friday 12 Jul 2019 21:04

نیب نوٹس بھیجنا چاہتا ہے تو بھیج دے، ہم نیب کو تسلیم نہیں کرتے، مولانا فضل الرحمٰن

نیب نوٹس بھیجنا چاہتا ہے تو بھیج دے، ہم نیب کو تسلیم نہیں کرتے، مولانا فضل الرحمٰن
اسلام ٹائمز۔ جمیعت علماء اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن نے کہا ہے کہ ہم نیب کو تسلیم نہیں کرتے، نیب کو استعمال کیا جا رہا ہے، اگر نیب کوئی نوٹس بھیجنا چاہتا ہے تو بھیج دے، 20 سال سے میری جائیداد کی کھوج لگائی جا رہی ہے، لیکن ان کو میرے خلاف کچھ بھی نہیں ملا۔ پشاور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ اسوقت ہم بدترین غلامی کا شکار ہیں، پاکستان کا بجٹ آئی ایم ایف نے بنایا اور اس کی ٹیم کو ہم پر مسلط کر دیا گیا ہے، بدترین حکومت نے عوام پر مہنگائی مسلط کر دی ہے، عوام کا جینا مشکل کر دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ڈاکومنٹیشن کے نام پر عوام کی جیبوں تک رسائی چاہتی ہے، آج میڈیا پر پابندی لگائی جا رہی ہے اور اینکر چیخ رہے ہیں، عوام کی چیخ و پکار آسمان کو چھو رہی ہیں، ملک کا ہر طبقہ، تاجر، دکاندار چیخ رہے ہیں۔ جے یو آئی (ف) کے سربراہ نے کہا کہ مغرب کا معاشی نظریہ اور فلسفہ مسلط کیا گیا ہے، امریکہ اور یورپ کو بتانا چاہتے ہیں کہ اس حکومت کی پشت پناہی چھوڑ دے۔

انہون نے وزیراعظم کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ سنا ہے عمران خان امریکہ جا رہا ہے، کس لئے جا رہے ہیں، یہ کسی کو معلوم نہیں، بتایا جائے عمران خان سفیر کے گھر کیوں قیام کریں گے؟ انہوں نے کہا کہ طبل جنگ بج چکا ہے اب فیصلہ میدان میں ہوگا، ہم نے جولائی کے الیکشن کو تسلیم نہیں کیا، 25 جولائی کو پوری قوم یوم سیاہ منائے گی، جے یو آئی (ف) پشاور میں ملین مارچ کرے گی۔ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ اکثریت چاہتی ہے کہ چیئرمین سینیٹ تبدیل کیا جائے، لیکن اقلیت کو کیا حق پہنچتا ہے کہ ڈپٹی چیئرمین کے خلاف تحریک عدم اعتماد لائے؟ انہوں نے کہا کہ ہم اس نیب کو تسلیم نہیں کرتے، اس نیب کو استعمال کیا جا رہا ہے، اگر نیب کوئی نوٹس بھیجنا چاہتا ہے تو بھیج دے، 20 سال سے میری جائیداد کی کھوج لگائی جا رہی ہے، لیکن ان کو میرے خلاف کچھ بھی نہیں ملا۔
خبر کا کوڈ : 804707
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب