0
Saturday 10 Aug 2019 20:39

ایم ڈبلیو ایم اور آئی ایس او کے زیراہتمام یافث نوید ہاشمی کی جبری گمشدگی کیخلاف علامتی دھرنا

ایم ڈبلیو ایم اور آئی ایس او کے زیراہتمام یافث نوید ہاشمی کی جبری گمشدگی کیخلاف علامتی دھرنا
اسلام ٹائمز۔ مجلس وحدت مسلمین اور آئی ایس او کے زیراہتمام ملتان کے معروف قانون دان یافث نوید ہاشمی ایڈووکیٹ کی بازیابی کے لئے ملتان پریس کلب کے سامنے دو گھنٹے تک علامتی دھرنا دیا گیا اور ان کی فوری بازیابی نہ ہونے پر احتجاجی تحریک چلانے کا اعلان کیا گیا، احتجاجی دھرنے میں آئی ایس او اور ایم ڈبلیو ایم کے رہنماؤں و کارکنوں سمیت متاثرہ خاندان اور خواتین کی بڑی تعداد نے شرکت کی، جبکہ جماعت اسلامی کے معروف قانون دان سابق صدر بار عظیم الحق پیرزادہ، فکس اٹ کے میر امجد خان نے اظہار یکجہتی کیا۔ علامتی دھرنے کے بعد احتجاجی ریلی بھی نکالی گئی، جس کی قیادت مجلس وحدت مسلمین جنوبی پنجاب کے جنرل سیکرٹری علامہ اقتدار حسین نقوی، آئی ایس او ملتان ڈویژن کے صدر عاطف حسین، وجاہت علی مرزا، علامہ قاضی نادر حسین علوی، سلیم صدیقی، مہر سخاوت علی سیال، ثقلین نقوی نے کی۔

اس موقع پر ایم ڈبلیو ایم جنوبی پنجاب کے سیکرٹری جنرل کا کہنا تھا کہ اسلام آباد میں دو روز قبل ملتان کے معروف قانون دان یافث نوید ہاشمی ایڈووکیٹ کی جبری گمشدگی قابل مذمت ہے، ریاست پاکستان کا فرض ہے کہ وہ اپنے شہریوں کو تحفظ فراہم کرے اور ان کے امن و امان کی ضمانت دے، رات کے اندھیرے میں یافث نوید ہاشمی کا لاپتہ ہونا سمجھ سے بالاتر ہے، قبل ازیں بھی ملت تشیع کے محب وطن شہریوں کو بلاجواز گم کیا گیا، جو کہ ایک لمحہ فکریہ ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ اگر یافث نوید ہاشمی کو فی الفور بازیاب نہ کیا گیا تو آئی ایس او اور ایم ڈبلیو ایم احتجاجی تحریک چلانے پر مجبور ہو جائے گی اور آج سے روزانہ کی بنیاد پر احتجاجی مظاہرے کئے جائیں گے۔
خبر کا کوڈ : 809982
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب