0
Wednesday 21 Aug 2019 22:30

ایک ہی دن ایک ہزار سعودی خواتین سرپرست کی اجازت کے بغیر بیرون ملک روانہ

ایک ہی دن ایک ہزار سعودی خواتین سرپرست کی اجازت کے بغیر بیرون ملک روانہ
اسلام ٹائمز۔ سعودی عرب کی حکومت نے رواں ماہ 2 اگست کو بالغ خواتین کو کسی مرد سرپرست کی اجازت کے بغیر بیرون ملک سفر کرنے کی اجازت دی تھی، رواں ماہ کے شروع ہونے سے قبل سعودی عرب کی تمام خواتین کو کسی بھی طرح کے بیرون ملک سفر سے قبل اپنے سرپرست مرد کی اجازت درکار ہوتی تھی۔ کسی بھی خاتون کو گھر کی کسی بڑی خاتون کی اجازت کے ساتھ بیرون ملک جانے کی اجازت نہیں دی جاتی تھی، تاہم رواں ماہ سے سعودی حکومت نے یہ شرط ختم کرتے ہوئے تمام بالغ خواتین کو جن کی عمر 21 برس یا اس سے زائد ہو، انہیں کسی مرد سرپرست کی اجازت کے بغیر ہر طرح کے بیرون ملک سفر کی اجازت دی تھی۔ مرد سرپرست کی اجازت کے بغیر بیرون ملک سفر کی جازت ملنے کے بعد کئی خواتین گذشتہ 2 ہفتوں سے بیرون ملک جا چکی ہیں، تاہم 19 اگست کو ایک ہی دن ایک ہی صوبے سے ایک ہزار خواتین نے بیرون ملک روانہ ہوکر تاریخ رقم کر دی عرب نشریاتی ادارے "العربیہ" کے مطابق 21 سال اور اس سے زائد عمر کی ایک ہزار خواتین سعودی عرب کے سب سے بڑے صوبے الشرقیہ سے بیرون ممالک روانہ ہوئیں۔ یہ پہلا موقع تھا کہ بیک وقت اتنی خواتین بیرون ملک روانہ ہوئیں اور انہیں سفر کرنے کے لیے کسی بھی طرح کا اجازت نامہ دکھائے بغیر ایئرپورٹ حکام کے آگے سے گزرنا پڑا۔

یہ واضح نہیں ہوسکا کہ ان ایک ہزار خواتین نے کن ممالک کا سفر کس مقصد کے لیے کیا، تاہم یہ سعودی عرب کی تاریخ میں پہلا واقعہ تھا کہ اتنی بڑی تعداد میں خواتین کسی مرد سرپرست کی اجازت کے بغیر بیرون ملک روانہ ہوئیں۔ سعودی حکومت نے جہاں رواں ماہ انہیں کسی مرد سرپرستی کے بغیر بیرون ملک سفر کرنے کی اجازت دی ہے، وہیں حکومت نے گذشتہ برس انہیں ڈرائیونگ کرنے کی اجازت بھی دی تھی، سعودی حکومت نے مئی 2017ء میں خواتین کو گھر سے باہر جانے کے لیے بھی کسی مرد کی اجازت سے آزاد قرار دیا تھا، اس سے قبل انہیں اپنے ہی ملک میں کسی کام سے نکلنے کے لیے بھی مرد سرپرست کی اجازت درکار ہوتی تھی، سعودی حکومت نے حالیہ برسوں میں جہاں خواتین کو ڈرائیونگ، سرپرست کی اجازت کے بغیر سفر کرنے، باہر ملازمتیں کرنے اور مرد حضرات کے ساتھ خبریں پڑھنے سمیت دیگر کام کرنے کی اجازت دی ہے، وہیں اب سعودی حکومت نے خواتین کو شوہر سے خلع لینے، شادی کے اندراج اور بچوں کی کفالت کے حوالے سے قانونی جنگ لڑنے جیسے اختیارات بھی دیئے ہیں۔
خبر کا کوڈ : 811925
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب