0
Sunday 29 Sep 2019 17:32

کشمیریوں کی حمایت کیلئے ہمت کی دعا کرنے پر قوم بالخصوصی اہلیہ بشریٰ بی بی کا مشکور ہوں، عمران خان کا وطن واپسی پر خطاب

کشمیریوں کی حمایت کیلئے ہمت کی دعا کرنے پر قوم بالخصوصی اہلیہ بشریٰ بی بی کا مشکور ہوں، عمران خان کا وطن واپسی پر خطاب
اسلام ٹائمز۔ وزیراعظم عمران خان نے امریکا سے وطن واپسی پر ایئرپورٹ پر ہی کارکنان سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دنیا کشمیریوں کے ساتھ ہو یا نہ ہو لیکن پاکستانی قوم کشمیریوں کے ساتھ رہے گی، یہ ایک جہاد ہے۔ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں پاکستان کی بہترین نمائندگی کرتے ہوئے مسئلہ کشمیر احسن انداز سے اُجاگر کرنے کے بعد وزیراعظم عمران خان وطن واپس پہنچ تو پارٹی کارکنان نے ان کا شاندار استقبال کیا۔ وزیراعظم پر گل پاشی کی گئی جبکہ ان کے حق میں نعرے بازی بھی کی گئی، اس موقع پر کابینہ اراکین اور پارٹی رہنماؤں سمیت کارکنان کی بڑی تعداد موجود تھی۔ ایئرپورٹ پر پارٹی کارکنان سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے اقوام متحدہ میں کشمیر کا مقدمہ پیش کرنے کی ہمت دینے کے لیے دعا کرنے پر میں پوری قوم بالخصوصی اہلیہ بشریٰ بی بی کے مشکور ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دنیا کشمیریوں کے ساتھ ہو یا نہ ہو لیکن پاکستانی کشمریوں کے ساتھ ہیں، یہ ایک جہاد ہے، ہم ان کے ساتھ اس لیے کھڑے ہیں کیونکہ ہمیں اللہ تعالیٰ کو خوش کرنا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ اچھا وقت بھی آتا ہے اور برا وقت بھی آتا ہے، برے وقت میں مایو نہیں ہونا کیونکہ کشمیر کے لوگ آپ کی جانب دیکھ رہے ہیں۔ اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ جب تک پاکستانی کشمیریوں کے ساتھ کھڑے ہیں تب تک کشمیر کے لوگ اپنی جدوجہد کرتے رہیں گے اور وہ ایک دن اپنی آزادی جیتیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ میں نے کہا تھا کہ میں کمشیریوں کا سفیر ہوں، پوری دنیا کے سامنے ہر فورم پر اس مودی اور فاشسٹ حکومت کو بے نقاب کروں گا۔ وزیراعظم نے اپنے خطاب کے آخر میں کہا کہ جو لوگ میرے ساتھ گزشتہ 20 سالوں سے موجود ہیں ان سب کو ایک چیز سمجھائی ہے کہ کوشش انسان کی ہوتی ہے، کامیابی اللہ تعالیٰ دیتا ہے۔

وفاقی کابینہ کے ممبران، پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما و کارکنان کی بڑی تعداد وزیراعظم کے استقبال کے لیے ایئرپورٹ پہنچی جبکہ اہم شاہراہوں پر استقبالیہ بینرز بھی آویزاں کیے گئے۔ اس سے قبل وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا تھا کہ اقوام متحدہ میں امت مسلمہ اور مظلوموں کی آواز بن کر انہوں نے پوری قوم کا سر فخر سے بلند کیا۔ انہوں نے پاکستان تحریک انصاف کے رہنماؤں، کارکنان اور کابینہ اراکین کو وزیراعظم کا استقبال کرنے کی دعوت دی۔ وزیراعظم عمران خان اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں خطاب کے بعد وطن واپسی کے لیے سعودی ایئرلائنز کی کمرشل پرواز کے ذریعے نیویارک سے جدہ پہنچے جہاں مختصر قیام کے بعد وطن روانہ ہوئے تھے۔

خیال رہے کہ امریکا سے پاکستان واپسی کے دوران ان کے طیارے میں پیدا ہونے والی فنی خرابی کے باعث پرواز کو واپس نیویارک بھیج دیا گیا تھا جہاں انہوں نے کچھ وقت گزارا اور پھر دوبارہ کینیڈی ایئرپورٹ سے روانہ ہوئے۔ سرکاری خبر ایجنسی اے پی پی کی رپورٹ کے مطابق وزیراعظم عمران خان سعودی حکومت کی جانب سے دیے گئے طیارے میں سفر کر رہے تھے۔ خیال رہے کہ وزیراعظم عمران خان نے اپنے دورہ نیویارک کے دوران اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے علاوہ دیگر بڑے فورمز پر مقبوضہ جموں و کشمیر کا معاملہ دنیا کے سامنے موثر انداز میں اٹھایا۔ انہوں نے مختلف ممالک کے سربراہان سے علیحدہ علیحدہ ملاقاتیں کیں جبکہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کے دوران عالمی برادری کو کشمیریوں کو حق خود ارادیت دلانے کے لیے بھرپور کردار ادا کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے خبردار کیا تھا کہ اگر بھارت نے کچھ غلط کیا تو ہم آخر دم تک لڑیں گے اور اس کے نتائج سوچ سے کہیں زیادہ خطرناک ہوں گے۔
خبر کا کوڈ : 819048
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب