0
Monday 14 Oct 2019 22:44
بیگناہ قید میں دہشتگرد آزاد، یہ ہے نیا پاکستان

زیارت ریزیڈنسی حملہ کیس, عدم ثبوت کا فائدہ دیکر تمام ملزمان کو بری کر دیا گیا

زیارت ریزیڈنسی حملہ کیس, عدم ثبوت کا فائدہ دیکر تمام ملزمان کو بری کر دیا گیا
اسلام ٹائمز۔ انسداد دہشت گردی عدالت نے زیارت ریزیڈنسی حملہ کیس میں نامزد تمام ملزمان کو بری کرنے کا حکم دے دیا۔ کوئٹہ کی انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے زیارت میں قائم قائد اعظم ریزیڈنسی حملہ کیس میں نامزد تمام ملزمان کو بری کردیا۔ انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج جسٹس رحیم داد خلجی نے اس کیس کا فیصلہ محفوظ کیا تھا۔ اے ٹی سی نے فریقین کے تمام دلائل سننے کے بعد ملزمان کو عدم ثبوت کی بنا پر بری کرنے کا حکم دیا۔ واضح رہے کہ کیس میں 13 ملزمان نامزد تھے، جس میں سے 10 ملزمان ضمانت پر تھے۔ اس سے قبل کیس میں حربیار مری سمیت 33 ملزموں پر فرد جرم عائد کی گئی تھی۔

واضح رہے کہ سال 2013ء میں زیارت میں دہشت گردوں نے قائداعظم محمد علی جناح کی آخری قیام گاہ زیارت ریزیڈنسی بم سے تباہ کرنے کی کوشش کی، جبکہ آتشزدگی کے باعث لکڑی کی بنی عمارت کا آدھے سے زیادہ حصہ مکمل طور پر جل گیا تھا۔ دہشتگردوں نے ریزیڈنسی میں ڈیوٹی پر تعینات پولیس اہلکار کو بھی فائرنگ کرکے شہید کیا تھا۔ حملے کی ذمہ داری کالعدم تنظیم کی جانب سے قبول کی گئی تھی۔ 4 سال قبل بلوچستان کے علاقے سنگان میں سکیورٹی فورسز کے آپریشن کے دوران کالعدم تنظیم کے 10 دہشت گرد ہلاک ہوگئے تھے، جن میں ریذیڈنسی حملے میں ملوث کمانڈر اسلم اچھو بھی شامل تھا، 12دہشت گردوں کو گرفتار بھی کیا گیا تھا۔
سال 2013ء میں 15 جون کو مسلح دہشت گردوں نے بلوچستان کے علاقے زیارت میں قائداعظم ریذیڈنسی پر حملہ کرکے قائداعظم کی آخری آرام گاہ کو تباہ کردیا تھا، جس کے بعد حکومت اور فوج کے تعاون سے زیارت ریزیڈنسی کی دوبارہ تعمیر نو کا اعلان کیا گیا اور سال 2014ء میں 14 اگست کے موقع پر اس کی تعمیر نو مکمل ہونے پر اس کا افتتاح کیا گیا۔
 
خبر کا کوڈ : 822031
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب