0
Friday 18 Oct 2019 22:47

حیدرآباد، چہلم امام حسینؑ پر فول پروف سیکیورٹی و ٹریفک پلان تیار کرنے کی ہدایت

حیدرآباد، چہلم امام حسینؑ پر فول پروف سیکیورٹی و ٹریفک پلان تیار کرنے کی ہدایت
اسلام ٹائمز۔ کمشنر حیدرآباد محمد عباس بلوچ کی زیر صدارت چہلم امام حسینؑ کے انتظامات کا جائزہ لینے کیلئے ایک اہم اجلاس شہباز ہال میں منعقد ہوا، اجلاس میں چہلم امام حسینؑ کے دوران امام بارگاہوں اور ماتمی جلوسوں کے راستوں پر سیکیورٹی، صفائی ستھرائی، بجلی کی بلاتعطل فراہمی اور امن و امان سے متعلق کمشنر حیدرآباد کو متعلقہ افسران کی طرف سے تفصیلی بریفگ دی گئی، اجلاس میں میئر حیدرآباد سید طیب حسین، ڈی آئی جی حیدرآباد نعیم احمد شیخ، ایڈیشنل کمشنر سید سجاد حیدر، ڈپٹی کمشنر حیدرآباد عائشہ ابڑو، ایس ایس پی حیدرآباد عدیل حسین چانڈیو اور دیگر متعلقہ افسران نے شرکت کی۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کمشنر محمد عباس بلوچ نے واسا حکام کو سختی سے ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ وہ ماتمی جلوسوں کے راستوں پر صفائی ستھرائی کے انتظامات کو یقینی بنائیں، باالخصوص قدم گاہ مولا علیؑ اور سخی عبدالوہاب شاہ جیلانی کی درگاہ کے اطراف سے سیوریج کے پانی کی نکاسی اور صفائی ستھرائی کے انتظامات مکمل کریں، جبکہ تلسی داس پمپنگ اسٹیشن پر چہلم امام حسینؑ کے موقع پر اور ہر جمعہ کے دن افسر کو تعینات کیا جائے، جو شکایات کا ازالہ کرے۔

انہوں نے حیسکو افسران کو ہدایت کی کہ چہلم امام حسینؑ کے موقع پر بجلی کی بلاتعطل فراہمی کو یقینی بنایا جائے اور لوڈشیڈنگ سے بھی گریز کیا جائے، تاکہ عزاداروں کو کسی بھی قسم کی پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ کمشنر محمد عباس بلوچ نے ایس ایس پی حیدرآباد کو امام بارگاہوں اور چہلم کے ماتمی جلوسوں کے راستوں پر فول پروف سیکیورٹی کے انتظامات اور منظم ٹریفک پلان تیار کرنے کی ہدایت کی۔ انہوں نے دیگر متعلقہ افسران کو ہدایت کی کہ جلوسوں کی گزرگاہوں پر لائٹنگ، ایمبولینسز کی فراہمی اسپتالوں میں ڈاکٹرز، پیرامیڈیکل اسٹاف اور ادویہ کی موجوگی کو یقینی بنائیں۔ انہوں نے متعلقہ افسران کو ہدایت کی کہ چہلم امام حسینؑ کے موقع پر ہی بابا سرفراز کلہوڑو کی درگاہ شریف پر پلے بھرائی ہوتی ہے، جہاں پر ہزاروں عقیدت مند و زائرین جن میں بڑی تعداد خواتین کی ہوتی ہے، جو پلے بھرائی میں شرکت کرنے آتی ہیں، یہاں بھی سیکورٹی، صفائی ستھرائی، بجلی کی بلاتعطل فراہمی اور امن و امان کی صورتحال کو یقینی بنایا جائے۔
خبر کا کوڈ : 822845
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے