0
Monday 21 Oct 2019 18:41
مولانا گرفتار ہو کر ہیرو بننا چاہیتے ہیں

مذاکرات منسوخ ہونا اس بات کا ثبوت ہے کہ حزب اختلاف ایک صفحے پر نہیں، شبلی فراز

مذاکرات منسوخ ہونا اس بات کا ثبوت ہے کہ حزب اختلاف ایک صفحے پر نہیں، شبلی فراز
اسلام ٹائمز۔ سینیٹ میں قائد ایوان شبلی فراز کے مطابق جمیعت علمائے اسلام کے رہنما مولانا فضل الرحمان گرفتار ہو کر ہیرو بننا چاہیتے ہیں لیکن حکومت انہیں اسیر بنانے کا ارادہ نہیں رکھتی۔ انہوں نے جے یو آئی کے سربراہ  چاہتے ہیں کہ انہیں گرفتار کیا جائے لیکن صاحب اقتدار مولانا کو گرفتار کر کے اتنی اہمیت نہیں دینا چاہتے۔ شبلی فراز نے کہا حکومتی کمیٹی کیساتھ جمیعت علمائے اسلام کے مذاکرات منسوخ ہونا اس بات کا ثبوت ہے کہ حزب اختلاف ایک صفحے پر نہیں۔ ایوان بالا میں قائد ایوان کا کہنا تھا کہ مولانا فضل الرحمٰن کا دھرنا ناکام ہوتا ہوا نظر آ رہا ہے اور اگر ایسا ہوا تو جے یو آئی رہنما کی سیاست ختم ہو جائے گی۔

شبلی فراز نے مشورہ دیا کہ مولانا فضل الرحمٰن کو سوچنا چاہیئے کہ ناکامی کے بعد کیا ہوگا۔ ان کا کہنا تھا کہ ملک میں امن و امان کی صورتحال برقرار رکھنے کے لئے قانون کے مطابق اقدامات کئے جائیں گے۔ دوسری جانب یہ خبریں بھی آرہی ہیں کہ مذاکرات میں ناکامی کی صورت میں مولانا فضل الرحمٰن کو نظر بند کر دیا جائے گا۔ ذرائع کے مطابق حکومت نے وفاقی دارالحکومت میں جمعیت علمائے اسلام (ف) کا دھرنا روکنے کا فیصلہ کیا ہے، اگرچہ انہیں جے یو آئی (ف) کی اعلٰی قیادت بشمول اس کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن کو نظر بند ہی کیوں نہ کرنا پڑے۔
 
خبر کا کوڈ : 823275
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے