0
Saturday 18 Jan 2020 17:43

کراچی، ایم کیو ایم کو منانے کیلئے حکومتی وفد کی ہفتے میں دوسری مرتبہ بہادرآباد آمد

کراچی، ایم کیو ایم کو منانے کیلئے حکومتی وفد کی ہفتے میں دوسری مرتبہ بہادرآباد آمد
اسلام ٹائمز۔ حکمران جماعت پاکستان تحریک انصاف کا وفد متحدہ قومی موومنٹ کو منانے کے لئے ایک ہفتے میں دوسری مرتبہ بہادرآباد مرکز پہنچ گیا ہے جہاں دونوں جماعتوں کے درمیان مذاکرات جاری ہیں۔ ایم کیو ایم پاکستان کے کنوینر خالد مقبول صدیقی حکومت کی جانب سے کئے گئے وعدے پورے نہ کرنے پر کابینہ سے الگ ہونے اور وزارت چھوڑنے کا اعلان کیا تھا۔ ایم کیو ایم کے ناراض رہنما اور دیگر قیادت کو منانے کے لئے رواں ہفتے پیر کو اسد عمر کی قیادت میں تحریک انصاف کے وفد نے ایم کیو ایم کے بہادرآباد مرکز کا دورہ کیا تھا۔

دونوں جماعتوں کے رہنماؤں کے درمیان اچھے ماحول میں مذاکرات ہوئے تھے لیکن اس کے باوجود حکمران جماعت ایم کیو ایم کو کابینہ میں شمولیت اور خالد مقبول صدیقی کو دوبارہ وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی کا قلم دان سنبھالنے پر رضامند نہیں کر سکی تھی۔ ایم کیو ایم کی ناراض قیادت کا منانے کے لئے تحریک انصاف کا وفد آج ایک مرتبہ پھر جہانگیر ترین کی قیادت میں بہادرآباد پہنچا۔ تحریک انصاف کے وفد میں جہانگیز ترین کے ہمراہ اسد عمر، حلیم عادل شیخ اور پرویز خٹک بھی موجود ہیں۔ تاہم گزشتہ ملاقات کی طرح اس مرتبہ بھی وفاقی حکومت میں ایم کیو ایم کے وزیر قانون فروغ نسیم ایک مرتبہ پھر ملاقات میں موجود نہیں ہیں۔

ایم کیو ایم کی جانب سے اپنے سابقہ مطالبہ دہراتے ہوئے پارٹی کے بند دفاتر کھولنے سمیت دیگر اہم مسائل کو دہرایا گیا۔ ملاقات کے دوران دونوں جماعتوں کے رہنماؤں کے درمیان کراچی کے حل طلب مسائل خصوصاً پانی اور ٹرانسپورٹ کے مسائل پر گفتگو کی جا رہی ہے۔ ذرائع کے مطابق ایم کیو ایم کی جانب سے دو وزارتوں کے حصول پر گفتگو کی جائے گی جس میں خصوصی طور پر خالد مقبول صدیقی کو دوبارہ وزارت نہ دیئے جانے کا ذکر کیا جائے گا۔ ذرائع نے بھی دعویٰ کیا کہ حکومتی وفد کی جانب سے خالد مقبول صدیقی کو کابینہ میں شرکت کی دوبارہ دعوت دی گئی، تاہم مسائل کے حل تک ایم کیو ایم نے کسی بھی پیشکش کو قبول کرنے سے انکار کردیا۔
خبر کا کوڈ : 839249
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش