0
Sunday 13 Sep 2020 22:57

کراچی کا انفرا اسٹرکچر ہمیں ابھی بہتر کرنا ہے، ناصر حسین شاہ

کراچی کا انفرا اسٹرکچر ہمیں ابھی بہتر کرنا ہے، ناصر حسین شاہ
اسلام ٹائمز۔ وزیر اطلاعات سندھ ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ شہر میں گرنے والی عمارتیں غیر قانونی تھیں اور ان غیر قانونی تجاوزات میں کے ایم سی اور ڈی ایم سیز بھی ملوث رہی ہیں، کراچی کا انفراسٹرکچر ہمیں ابھی بہتر کرنا ہے۔ ان خیالات کا اظہار وزیر اطلاعات سندھ سید ناصر حسین شاہ نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ حالیہ بارشوں سے کراچی، حیدرآباد، میرپورخاص، شہید بینظیر آباد متاثر ہوئے، کراچی کا انفرا اسٹرکچر ہمیں ابھی بہتر کرنا ہے۔

ناصر شاہ کا کہنا تھا کہ جہاں تک کام کی بات ہے، سندھ حکومت ہی کررہی ہے، مشرف دور میں لوگوں کو نالوں پر الاٹمنٹ دی گئی، وزیر بلدیات جام خان دور میں گجر اور دیگر نالوں سے تجاوزات ہٹائیں تو عدالت سے اسٹے آگیا، جسٹس گلزار احمد کا شکریہ جن کے احکامات کے بعد اسٹے نہیں ملے گا۔

وزیر اطلاعات سندھ نے کہا کہ کچے کے علاقے میں محکمہ جنگلات کے زیر قبضہ زمین خالی کرائی۔ ان کا کہنا تھا کہ کراچی میں گرنے والی عمارتیں غیرقانونی بنی ہوئی ہیں، پہلی بار بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے 40 ملازمین برطرف کئے۔ وزیر بلدیات سندھ ناصر حسین شاہ کا مزید کہنا تھا کہ غیرقانونی تجاوزات میں کی ایم سی، ڈی ایم سیز بھی ملوث رہی ہے، 1600 سے زائد غیرقانونی تعمیرات گرائیں، مزید کارروائی کریں گے۔
خبر کا کوڈ : 886036
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش