1
Tuesday 20 Oct 2020 00:36

امریکہ و مغرب کی پیداوار "تکفیریوں" کو اسلام و مسلمین کا چہرہ بگاڑنے کیلئے استعمال کیا جاتا ہے، سید عبدالملک الحوثی

امریکہ و مغرب کی پیداوار "تکفیریوں" کو اسلام و مسلمین کا چہرہ بگاڑنے کیلئے استعمال کیا جاتا ہے، سید عبدالملک الحوثی
اسلام ٹائمز۔ یمنی مزاحمتی تحریک انصار اللہ کے سربراہ سید عبدالملک بدرالدین الحوثی نے اپنے تازہ ترین خطاب میں اسلام و مسلمانوں کے چہرے کو بگاڑ پر پیش کئے جانے پر مبنی مغربی ممالک کے اقدامات پر روشنی ڈالی ہے۔ عرب نیوز چینل المسیرہ کے مطابق سید عبدالملک الحوثی نے یمنی قیدیوں کو وطن پہنچنے پر خوش آمدید کہتے ہوئے "تحریف" اور "گمراہی" کو امتِ مسلمہ کے درمیان موجود دو عظیم دراڑیں قرار دیا اور کہا کہ دشمن انہی "گمراہیوں" کے ذریعے قران کریم اور مقدس شخصیات کی توہین کا مرتکب ہوتا ہے۔ انہوں نے تاکید کرتے ہوئے کہا کہ مغربی تمدن کے اندر رحم نام کی کوئی چیز موجود نہیں۔ انہوں
نے کہا کہ مغربی طاقتیں انسانی معاشروں کو پیروں تلے کچل کر، لوگوں کی آزادی کو چھین کر اور ان کی دولت اور سرزمین غصب کر کے انسانی حقوق کا نعرہ لگاتی ہیں۔

انصاراللہ یمن کے سربراہ نے اپنے خطاب کے اندر یہ سوال اٹھاتے ہوئے کہ کیا مغربی ممالک نے یمن، فلسطین اور دوسری عرب و مسلم سرزمینوں پر انسانی حقوق کا خیال رکھا ہے؟ کہا کہ ٹرمپ عرب سرزمینوں کو غصب اور دشمن کے حوالے کرنے پر فخر محسوس کرتا ہے جیسا اس نے شامی گولان ہائیٹس کے ساتھ کیا ہے، یہ کیسا تمدن ہے؟ سید عبدالملک الحوثی نے زور دیتے ہوئے کہا کہ مغربی دنیا فساد کا زمینہ ہموار کرنے کے بعد آزادی کا نعرہ لگاتے ہوئے حضرت رسول خدا صلی اللہ علیہ
و آلہ وسلم کی توہین کی مرتکب ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ فرانس کے اندر صیہونی یہودیوں پر اعتراض اور ان کے منگھڑت ہولوکاسٹ کے دعوے کے خلاف ثبوت فراہم کرنے کو ممنوع قرار دیا گیا ہے جبکہ جو شخص وہاں ایسا کام انجام دے اس کے خلاف قانونی کارروائی کی جاتی ہے۔ سید عبدالملک الحوثی نے کہا کہ مغرب آپ کو اللہ، اسلام اور انبیائے الہی کی توہین کی مکمل اجازت اور ملحد ہو جانے کی ترغیب دیتا ہے لیکن آپ کو کبھی صیہونی یہودیوں کی توہین یا ان کے ساتھ دشمنی کی اجازت نہیں دیتا۔

یمنی انقلاب کے سربراہ نے اپنے خطاب میں تاکید کرتے ہوئے کہا کہ آج دنیا بھر میں اسلام، رسول اسلام (ص) اور مسلمانوں کے خلاف کھلم کھلا
حملہ کیا جا رہا ہے جو ہماری سوچ اور ہمارے ایمان کو "تہذیبی تسلط" کی خاطر مسلسل نشانہ بنا رہا ہے۔ انہوں نے اس بات پر تاکید کرتے ہوئے کہ امتِ مسلمہ کو امریکی، مغربی و صیہونی منصوبوں کا شکار بنانے کے لئے وسیع منصوبہ بندی کی جا رہی ہے، کہا کہ امتِ مسلمہ کو چاہئے کہ وہ ایسے کسی منصوبے کا حصہ نہ بنے جس کا مقصد ہمیں اپنی سوچ اور ایمانی شناخت سے علیحدہ کر کے اپنا غلام بنانا ہو جبکہ ہمیں چاہئے کہ اپنی ایمانی شناخت کو مضبوط بنائیں تاکہ امریکہ، اسرائیل یا ان کے کٹھ پتلی حکمران ہم سے غلط فائدہ اٹھاتے ہوئے ہماری ثروت کو لوٹ نہ سکیں۔ انہوں نے کہا کہ جب ہم اپنی ایمانی شناخت کو مضبوط بنا لیں گے
تو تب ہی ہمیں صحیح معنوں میں آزادی اور دشمن کی غلامی سے نجات حاصل ہو گی۔

انصار اللہ کے سربراہ نے فرانسیسی صدر کی جانب سے جاری ہونے والے توہین آمیز بیان کو امتِ مسلمہ کے ساتھ فرانس کی دیرینہ دشمنی قرار دیتے ہوئے کہا کہ فرانس سمیت تمام مغربی طاقتیں، اسلام اور رسول اسلام (ص) کی توہین میں مشغول ہیں درحالیکہ وہ غاصب صیہونی یہودیوں کے ساتھ خندہ پیشانی کے پیش آتے ہیں اور ان کی کسی بھی قسم کی توہین سے گریز کرتے ہیں۔ انہوں نے اپنے خطاب کے آخر میں امتِ مسلمہ کے درمیان امریکہ و مغربی طاقتوں کی جانب سے پھیلائے گئے "تکفیریت" نامی فتنے کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ آج انسانیت کو درپیش تمام
کے تمام مسائل کی اصلی وجہ امریکہ جیسے مستکبر ممالک اور غاصب صیہونی رژیم ہے۔ انہوں نے زور دیتے ہوئے کہا کہ تکفیریوں کو اسلام اور مسلمانوں کا چہرہ بگاڑ کر پیش کرنے کے لئے وجود میں لایا گیا اور یہی وجہ ہے کہ انہیں امریکہ اور فرانس سمیت تمام مغربی ممالک کی مکمل حمایت حاصل ہے۔ انہوں نے تاکید کرتے ہوئے کہا کہ یہ ممالک امتِ مسلمہ کو نشانہ بنانے کے لئے تکفیریوں کی پشت پناہی میں مصروف ہیں جبکہ تکفیری امتِ مسلمہ کا قتل عام کر رہے ہیں۔ سید عبدالملک الحوثی نے کہا کہ تکفیری امریکہ و مغربی طاقتوں کی پیداوار ہیں جبکہ فرانس سمیت تمام مغربی ممالک کی خفیہ ایجنسیاں انہیں مدد فراہم کر رہی ہیں۔
خبر کا کوڈ : 892989
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

ہماری پیشکش