0
Thursday 19 Nov 2020 18:24

قومی ایئر لائن کے سی ای او ایئر مارشل ارشد ملک کو فوری عہدے سے ہٹانے کی سفارش

قومی ایئر لائن کے سی ای او ایئر مارشل ارشد ملک کو فوری عہدے سے ہٹانے کی سفارش
اسلام ٹائمز۔ آڈیٹر جنرل آف پاکستان نے قومی ایئر لائن کے چیف ایگزیکٹو افسر (سی ای او) ایئر مارشل ارشد ملک کو فوری عہدے سے ہٹانے کی سفارش کردی۔ حکومتی آڈٹ پیرا 2019 میں سی ای او ارشد ملک سے وصول کیے گئے اضافی الاونسز واپس لینے کی بھی سفارش کی گئی۔ علاوہ ازیں آڈٹ پیرا میں پی آئی اے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے خلاف بھی کارروائی پر زور دیا گیا۔ آڈٹ پیرا کے مطابق ایئر مارسل ارشد ملک ایک ہی وقت میں ائرفورس اور پی آئی اے سے لاونسز وصول کرتے رہے ہیں۔ آڈیٹر جنرل آف پاکستان کے مطابق سروسز رولز کے تحت ارشد ملک ائیر فورس کی ملازمت کے دوران بطور چیف ایگزیکٹو پی آئی اے کے اضافی مراعات وصول نہیں کرسکتے تھے۔ حکومتی آڈٹ پیرا 2019 میں کہا گیا کہ میں سی ای او ارشد ملک نے الاونسز کی مد میں پی آئی اے سے تقریباً 30 لاکھ روپے غیر قانونی طور پر وصول کیے۔ آڈٹ رپورٹ کے مطابق کہ پی آئی اے میں ائیرفورس سے آئے دیگر افسران نے بھی تقریباً 7 کروڑ 18 لاکھ روپے غیر قانونی الاونسز وصول کیے۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا کہ پی آئی اے میں ڈیپوٹیشن پرارشد ملک کے علاوہ 5 ائیر کموڈور، 2 ونگ کمانڈر اور ایک فلائٹ لیفٹینینٹ پی آئی اے میں اضافی الاونسز وصول کرتے رہے۔ آڈٹ پیرا میں کہا گیا کہ حکومتی رولز کے مطابق ڈیپوٹیشن پر آنے والے افسران صرف رہائش، بجلی کے بل اور فرنیچر کی مد میں سہولیات حاصل کرسکتے ہیں۔ اس میں انکشاف کیا گیا کہ تمام افسران پی آئی اے سے ہاوس رینٹ لینے کے ساتھ پی اے ایف کی رہائش گاہ بھی استعمال کررہے۔ آڈٹ پیرا میں کہا گیا کہ ائیر مارشل ارشد ملک کی تعیناتی کے وقت مطلوبہ تعیناتی کے معیار کو بھی نظر انداز کیا گیا۔ رپورٹ کے مطابق تعیناتی کے وقت اخبار میں دیے جانے والے اشتہار میں مطلوبہ تعلیم میں بھی ارشد ملک کے لیے خصوصی رعایت پیدا کی گئی اور مطلوبہ تعلیمی معیار سے ہٹ کر وار کورس اور ملٹری آپریشن جیسے مضامین شامل کیے گئے۔

واضح رہے کہ ایئر مارشل ارشد ملک کے خلاف ایئر لائنز سینئر اسٹاف ایسوسی ایشن (ساسا) کے جنرل سیکریٹری صفدر انجم نے عدالت میں درخواست دائر کی تھی جس میں موقف اختیار کیا گیا کہ اس عہدے کے لیے ایئر مارشل ارشد ملک تعلیمی معیار پر پورا نہیں اترتے اور ان کا ایئر لائن سے متعلق کوئی تجربہ نہیں ہے۔ درخواست میں موقف اختیار کیا گیا تھا کہ ایئر مارشل ارشد ملک نے 1982 میں بی ایس سی کیا اور اس کے بعد وار اسٹیڈیز سے متعلق تعلیم حاصل کی، تاہم انہیں ایئر لائن انڈسٹری اور کمرشل فلائٹس سے متعلق سول ایویشن قوانین سے کچھ آگاہی نہیں ہے۔ اس ضمن میں مزید کہا گیا تھا کہ ایئر مارشل ارشد ملک کی تعیناتی میں پبلک سیکٹر کمپنیز رولز 2013 اور رول 2 اے کو قطعی طور پر نظر انداز کیا گیا جس کے تحت سی ای او تعینات کیے جاتے ہیں۔ تاہم یہاں یہ بات مدنظر رہے 21 جنوری 2019 کو لاہور ہائی کورٹ نے قومی ایئر لائن کے سی ای او ایئر مارشل ارشد ملک کی تعیناتی قانون کے مطابق قرار دی تھی۔
خبر کا کوڈ : 898786
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش