1
Wednesday 9 Dec 2020 23:59

سعودی اتحاد میں شامل متعدد یمنی کمانڈروں کی اپنے دَستوں کے ہمراہ صنعاء واپسی کا سلسلہ جاری

سعودی اتحاد میں شامل متعدد یمنی کمانڈروں کی اپنے دَستوں کے ہمراہ صنعاء واپسی کا سلسلہ جاری
اسلام ٹائمز۔ عالمی میڈیا کے مطابق صنعاء ان دنوں جارح فورسز سے الگ ہو کر مزاحمتی محاذ کے ساتھ منسلک ہونے والے سینکڑوں یمنی کمانڈرز و فوجیوں کے گرما گرم استقبال میں مصروف ہے۔ عرب ای مجلے الاخبار کے مطابق گذشتہ ایک ہفتے کے دوران کم از کم 300 یمنی فوجی افسر منصور ہادی سے الگ ہو کر صنعاء پہنچے ہیں، جن میں کئی ایک کمانڈر بھی شامل ہیں۔ رپورٹ کے مطابق صنعاء کے ساتھ ملحق ہونے والے یمنی فوجیوں کی تعداد زیادہ ہونے کے باعث، جارح سعودی فوجی اتحاد کے حملوں سے بچاؤ کی خاطر وزارت دفاع کی جانب سے یمنی صوبوں مأرب اور الجوف میں متعدد غیر معمولی دفاعی اقدامات بھی کئے گئے۔

یمنی دارالحکومت صنعاء سے عینی شاہدین نے الاخبار کو بتایا کہ جارح سعودی فوجی اتحاد سے علیحدہ ہو کر گذشتہ روز صنعاء کے ساتھ منسلک ہونے والوں میں "لواء العز" بریگیڈ کے کمانڈر بریگیڈیئر جنرل "حمد راشد الحزمی" بھی شامل ہیں، جنہیں سابق و مستعفی یمنی حکومت کی جانب سے صوبہ الجوف میں تعینات کیا گیا تھا جبکہ ان کی کمان میں موجود سینکڑوں فوجی افسر و دستے بھی مزاحمتی فورسز کے ساتھ آملے ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ قبل ازیں جارح سعودی اتحاد کی جانب سے "الخوبہ" نامی علاقے میں تعینات 25 اعلیٰ فوجی افسر بھی صنعاء کی جانب پلٹ آئے تھے، جن میں " اللواء الثالث عروبة" نامی فوجی بریگیڈ کے انٹیلیجنس چیف "کرنل احمد عباس السدعی" بھی شامل ہیں۔ علاوہ ازیں زون نمبر 7 سے بھی سعودی فوجی اتحاد کے دسیوں فوجی افسر، جو مأرب کے محاذ پر تعینات تھے، صنعاء حکومت کے ساتھ وفاداری کا اعلان کرچکے ہیں۔

الاخبار کا لکھنا ہے کہ صنعاء کو سابق و مستعفی یمنی صدر عبدربہ منصور ہادی کے ساتھ منسلک دسیوں سیاسی رہنماؤں، مستعفی حکومت کے اراکین قومی اسمبلی اور معروف سماجی و میڈیا شخصیات کی جانب سے وفاداری کی 60 سے زائد پیشکشیں موصول ہوچکی ہیں جبکہ صنعاء واپس پلٹنے کا ارادہ رکھنے والی شخصیات اپنی حفاظت کے حوالے سے تشویش کا شکار ہیں اور ان کا مطالبہ ہے کہ ان کے ساتھ "عام معافی" کے اعلان کے تحت برتاؤ کیا جائے۔ اس حوالے سے منصور ہادی کی سیاسی پارٹی "جنرل پیپلز کانگریس یمن" (General People's Congress-المؤتمر الشعبي العام) کے مرکزی رہنماء "یاسر الیمانی" نے میڈیا کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے اپنی "پرامن واپسی" کی درخواست کے قبول کر لئے جانے پر صنعاء حکومت اور براہ راست رابطے کی استدعا کی قبولی پر انصاراللہ یمن کے سربراہ سید عبدالملک الحوثی کا خصوصی شکریہ ادا کیا۔
خبر کا کوڈ : 902741
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش