0
Friday 16 Apr 2021 21:44

خیبر پختونخوا حکومت کا سورہ رسم کے خلاف قانون سازی کا فیصلہ

خیبر پختونخوا حکومت کا سورہ رسم کے خلاف قانون سازی کا فیصلہ
اسلام ٹائمز۔ خیبر پختونخوا حکومت نے سورہ رسم کے خلاف قانون سازی کا فیصلہ کیا ہے۔ اس حوالے سے صوبائی وزیر شوکت یوسفزئی کا کہنا ہے کہ سورہ رسم کا معاملہ انتہائی حساس ہے اسے روکنے کے لیے قانون سازی ہونی چاہیے۔ شوکت یوسفزئی کا کہنا تھا کہ کسی کے کیے کی سزا کسی دوسرے کو نہیں دینی چاہیے، آج کی عورت پڑھی لکھی اور باشعور ہے، ایسا قانون نہیں ہونا چاہیے کہ عورت کی زبردستی شادی کردی جائے، ایسی رسم کو روکنے کے لئے قانون سازی کی اشد ضرورت ہے، اس حوالے سے پولیس نے متعدد بار کارروائی کی ہے لیکن سورہ کے ملزمان اس لیے بچ جاتے ہیں کہ قانون میں سقم ہے۔

واضح رہے کہ خیبر پختونخوا کے دور افتادہ علاقوں میں آج بھی قبائلی سسٹم رائج ہے اور جب دو فریقین کے درمیان معاملہ قتل ہونے تک پہنچ جائے، تو قبائلی طریقے کے مطابق دونوں فریقین میں صلح کرائی جاتی ہے، جس کے تحت مقتول فریق کے لوگ قاتل سے صلح میں لڑکی، بہن، یا بھتیجی مانگتے ہیں، کئی بار ایک ہی وقت میں دو لڑکیوں کے رشتے مانگے جاتے ہیں، اس رسم کو ”سورہ” کہا جاتا ہے۔
خبر کا کوڈ : 927563
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش