0
Monday 5 Jul 2021 14:43

مقدسات کی توہین کرنیوالے کیلئے کوئی معافی نہیں، حافظ طاہر اشرفی

مقدسات کی توہین کرنیوالے کیلئے کوئی معافی نہیں، حافظ طاہر اشرفی
اسلام ٹائمز۔ وزیراعظم کے نمائندہ خصوصی برائے مذہبی ہم آہنگی، پاکستان علماء کونسل کے چیئرمین اور متحدہ علماء بورڈ پنجاب کے سربراہ حافظ طاہر اشرفی نے علامہ محمد حسین اکبر اور دیگر علماء کے ہمراہ قرآن بورڈ لاہور میں مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ملک کا امن مقدم ہے، بیرونی سازشوں کی یلغار ہو چکی ہے، تمام مکاتب فکر کو بیداری کا ثبوت دیتے ہوئے دشمن کی سازشوں کو ناکام بنانا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں ایک بار پھر فرقہ واریت پھیلانے کی سازش کی جا رہی ہے، جس کیلئے تمام مکاتب فکر کے علماء اور زعماء کو اپنا اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ آئمہ کی شان میں گستاخی کرنیوالے کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے، جو بھی کسی کے مقدسات کی توہین کرے گا، اس کو کسی طور معاف نہیں کیا جائے گا، حکومت وحدت اور بھائی چارے کی فضا قائم کر رہی ہے۔ یہ حکومت کی کوششوں سے ہی ہوا ہے کہ ملک میں تمام مکاتب فکر کے درمیان ہم آہنگی ہے، بھائی چارہ ہے۔
 
انہوں نے کہا کہ توہین ناموس رسالت اور توہین مذہب پر کوئی ایک غلط مقدمہ درج نہیں ہوا، اس کا کریڈٹ متحدہ علماء بورڈ کو جاتا ہے، گزشتہ سات ماہ سے ملک میں فرقہ وارانہ کوئی تصادم نہیں ہوا، اس کا کریڈٹ بھی حکومت کو ملنا چاہیے۔ یورپ، امریکہ میں واقعات ہوئے ہیں لیکن یہاں ہم نے رواداری اور اخوت کا ماحول پیدا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ علماء بورڈ کے دور میں پہلی بار تمام مذاہب کے مسائل بھی حل کئے ہیں، ہندووں، سکھوں اور عیسائیوں کو بھی اپنے ساتھ بٹھایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان کی صورتحال کے بعد خطے میں تفریق کی سازشیں ہو رہی ہیں، پاکستان کو ہدف بنایا جا رہا ہے، جوہر ٹاون دھماکہ اس کی مثال ہے، انڈیا اور دیگر دشمن چاہتے ہیں یہاں بدامنی ہو۔ انہوں نے کہا کہ ہم افغان حکومت سے بھی اپیل کرتے ہیں کہ خون خرابہ سے بچیں، افغانستان کے امن کو ہم پاکستان کا امن سمجھتے ہیں، ہم مہاجرین کا مزید بوجھ نہیں اٹھا سکتے۔
 
انہوں نے کہا کہ مجھے دکھ کیساتھ کہنا پڑتا ہے کہ پاک افغان علماء کانفرنس کے حوالے سے افواہیں پھیلائی جا رہی ہیں، ہم نے اس کانفرنس میں کوئی فتویٰ نہیں دیا، یہ کانفرنس سعودی عرب میں ہوئی تھی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو ہدف بنا کر یہاں بدامنی پھیلائی جا رہی ہے، محرم سے قبل ملک کی پُرامن فضا کو خراب کرنے کی کوشش کی جائیں  گی، اس پر تمام مکاتب فکر بیدار رہیں، وزیراعظم پاکستان عمران خان نے اس حوالے سے واضح ویژن دیا ہے کہ ہم ملک میں فرقہ واریت کو کسی طور برداشت نہیں کریں گے۔ لہذا ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ ذمہ دار ادارے شرپسندی پھیلانے والے ایسے شرپسندوں کیخلاف کارروائی کریں اور انہیں کیفر کردار تک پہنچائیں، یہ عناصر معاشرے کا ناسور اور دشمن ممالک کے ایجنٹ ہیں۔
خبر کا کوڈ : 941673
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

ہماری پیشکش