0
Friday 3 Sep 2021 22:14

پاکستان افغان حکومت کو تسلیم کرے اور مغرب کی طرف نہ دیکھے، سراج الحق کا مطالبہ 

پاکستان افغان حکومت کو تسلیم کرے اور مغرب کی طرف نہ دیکھے، سراج الحق کا مطالبہ 
اسلام ٹائمز۔ امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا ہے کہ افغان عوام نے انگریزوں، روسیوں اور امریکیوں کو بے سروسامانی کے باوجود شکست فاش سے دوچار کیا۔ افغانستان میں اسلامی قوتوں کی کامیابی سے پوری امت کا سر فخر سے بلند ہوا۔ 46ممالک کی افواج کا جدید اسلحہ اور ٹیکنالوجی افغانیوں کے جذبہء ایمانی کے سامنے ریت کی دیوار ثابت ہوا۔ بلاشبہ افغانستان کی فتح پاکستان سمیت پوری امت کی فتح ہے۔ افسوس کہ اس مسرت اور کامرانی کے موقع پر امت مسلمہ اور کشمیریوں کے عظیم قائد سید علی گیلانی ہم سے جدا ہو گئے۔ ایسے رہنما صدیوں بعد پیدا ہوتے ہیں۔ وہ نڈر اور بے باک تھے، علالت اور بڑھاپے میں بھی انھوں نے بھارتی ظلم و ستم کا ڈٹ کر مقابلہ کیا۔ سید علی گیلانی کو پاکستان سے محبت تھی۔ کشمیری رہنما کی وفات پر اگرچہ تحریک آزادی کشمیر کو دھچکا لگا، مگر مجھے یقین ہے کہ کشمیری بھارت کے ظالمانہ قبضہ کے خلاف جدوجہد کو بھرپور طریقے سے جاری رکھیں گے۔ پاکستانی حکمرانوں نے کشمیر کاز سے بے وفائی کی، عوام الیکشن میں یہ حساب چکائیں گے۔ قوم کشمیری بھائیوں کے ساتھ کھڑی ہے۔

امیر جماعت کی اپیل پر امریکہ کی افغانستان سے پسپائی پر ملک بھر میں یوم تشکر و دعا منایا گیا۔ مساجد میں لاکھوں مسلمانوں نے اس عظیم کامیابی پر سجدہ شکر ادا کیا اور اتحاد امت کے لیے دعائیں کیں۔ نماز جمعہ کے بعد ریلیاں اور جلوس نکالے گئے، جن میں لوگوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ نماز جمعہ کی ادائیگی کے بعد امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے سید علی گیلانی کی غائبانہ نماز جنازہ بھی پڑھائی جس میں مختلف طبقہ ہائے فکر سے تعلق رکھنے والے افراد شریک تھے۔ امیر جماعت اسلامی نے کہا کہ افغان عوام پر مسلسل 20سالوں سے گولیوں کی بارش ہو رہی تھی، مگر افغانیوں نے جارح قوتوں کے آگے سر نہیں جھکایا اور آخر کار دو دہائیوں کے بعد اللہ تعالی نے انھیں کامیابی و کامرانی سے نوازا۔ انھوں نے کہا کہ مشکل حالات میں پاکستان نے ہمیشہ افغانی بھائیوں کا ساتھ دیا۔ لاکھوں مہاجرین پاکستان میں قیام پذیر رہے۔ اب وقت آ گیا ہے کہ افغانستان سمیت خطے میں امن اور خوشحالی آئے۔ غربت اور بے روزگاری کا خاتمہ ہوا۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان افغان حکومت کو تسلیم کرے اور مغرب کی طرف نہ دیکھے۔ دونوں ممالک ایک دوسرے کے لیے لازم و ملزوم ہیں۔ افغانستان میں امن ہو گا تو پاکستان میں بھی امن ہوگا۔ مستحکم افغانستان پاکستان کے لیے ناگزیر ہے۔

امیر جماعت نے کہا کہ سید علی گیلانی کے ساتھ محبت کا تقاضا یہ ہے کہ حکومت کشمیر پر واضح اور جاندار موقف اپنائے اور کسی قسم کی کمزوری نہ دکھائے۔ کشمیر کے لیے الگ ڈپٹی وزیرخارجہ کا عہدہ متعارف کرایا جائے۔ علی گیلانی کے نام پر بڑی شاہراہ کو منسوب کیا جائے اور دنیا بھر میں پاکستان کی ایمبیسیز میں کشمیر کے الگ ڈیسک قائم کیے جائیں۔ انھوں نے کہا کہ سید علی گیلانی ایک نظریہ لا نام تھے۔ وہ کشمیریوں اور پاکستانیوں کے دلوں میں ہمیشہ زندہ رہیں گے۔
خبر کا کوڈ : 951977
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش