0
Sunday 31 Mar 2024 14:32

موجودہ انٹرنیٹ کی رفتار کے مقابلے میں 45 لاکھ گنا زیادہ تیز انٹرنیٹ کا تجربہ

موجودہ انٹرنیٹ کی رفتار کے مقابلے میں 45 لاکھ گنا زیادہ تیز انٹرنیٹ کا تجربہ
اسلام ٹائمز۔ سائنس دانوں نے موجودہ انٹرنیٹ کی رفتار کے مقابلے میں اس سے کئی لاکھ گنا زیادہ تیز رفتار انٹرنیٹ کا عالمی ریکارڈ قائم کیا ہے۔ بین الاقوامی خبر رساں اداروں کے مطابق سائنس دانوں نے موجودہ انٹرنیٹ (برانڈ بینڈ) کی رفتار کے مقابلے میں 45 لاکھ گنا زیادہ تیز انٹرنیٹ کا تجربہ کرکے عالمی ریکارڈ قائم کرلیا۔
ایوسٹن یونیورسٹی برمنگھم سے وابستہ سائنسدانوں اور ایک عالمی ٹیم نے دنیا میں عام طور پر چلنے والے انٹرنیٹ (آپٹیکل فائبر) کی مدد سے 301 ٹیرا بٹس فی سیکنڈ کی رفتار سے انٹرنیٹ کی اسپیڈ دکھائی، جس سے نیا ریکارڈ قائم ہوگیا۔

سائنس دانوں نے یہ ریکارڈ ڈیٹا منتقلی کی رفتار ایک نئی آپٹیکل پروسیسنگ ڈیوائس بنا کر حاصل کی، جس نے نئی ویو لینتھ (طول موج) بینڈز کی راہ کھولی جس کو اس سےقبل فائبر آپٹک نظام میں استعمال نہیں کیا گیا۔ ایسٹن یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر آئن فلپس کا کہنا تھا کہ ڈیٹا کو گھر یا دفتر میں موجود انٹرنیٹ کنیکشن جیسے آپٹیکل فائبر کے ذریعے بھیجا گیا۔ تاہم، محققین نے کمرشلی دستیاب سی- اور ایل- بینڈز کے ساتھ دو اضافی اسپیکٹرل بینڈز ای-بینڈ اور ایس-بینڈ کا استعمال کیا۔ ان بینڈز کی روایتی طور پر ضرورت نہیں ہوتی کیونکہ سی- اور ایل- بینڈز صارفین کی طلب کو پورا کر دیتے ہیں۔
خبر کا کوڈ : 1126036
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش