0
Monday 7 Apr 2014 21:00

طاقت کے بل بوتے پر سرحدوں میں تبدیلی قابل قبول نہیں، مشاہد حسین سید

طاقت کے بل بوتے پر سرحدوں میں تبدیلی قابل قبول نہیں، مشاہد حسین سید
اسلام ٹائمز۔ پاکستان مسلم لیگ قاف کے سیکرٹری جنرل اور سینیٹ ڈیفنس کمیٹی کے چیئرمین سینیٹر مشاہد حسین سید نے کہا ہے کہ حالیہ یوکرائین تنازع میں پاکستان کا موقف اصولی ہے، جبکہ کریمیا میں روس کی جانب سے طاقت کا استعمال یو این چارٹر اور عالمی قوانین کی سنگین خلاف ورزی ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پاک چائینہ انسٹی ٹیوٹ اور ایس ڈی پی آئی کے زیراہتمام منعقد ہونیوالے’’تیزی سے بدلتا عالمی منظر نامہ‘‘ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ طاقت کے بل بوتے پر سرحدوں میں تبدیلی قابل قبول نہیں ہے۔ اکیسویں صدی کی مہذب دنیا میں ایسے اقدامات کی کسی صورت کوئی گنجائش نہیں ہونی چاہیے۔ انہوں نے امریکہ اور روس کے مابین نئی سرد جنگ کے احیاء کا اندیشہ ظاہر کرتے ہوئے اسے خطے کیلئے تباہ کن قرار دیا۔ سینیٹر مشاہد نے یوکرائین کے سفیر سے اظہارِ یکجہتی کرتے ہوئے کہا کہ 1971ء میں پاکستان کو بھی ایسے ہی سانحے کا سامنا کرنا پڑا تھا جب بیرونی قوتوں کی ایماء اور طاقت کے بل بوتے پر مشرقی حصہ جدا کر دیا گیا۔ انہوں نے کریمیا میں موجود تاتاری مسلمانوں پر سٹالن دور میں ڈھائے جانے والے مظالم کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ لگ بھگ تین لاکھ کے قریب تاتاری مسلمانوں کو اپنے ہی دیس میں پردیسی بنادیا گیا ہے۔ اس موقع پر انہوں نے یوکرائین میں پاکستانی تارکین وطن کے حوالے سے آگاہ کیا کہ یوکرائین کی امیر ترین شخصیت محمد ظہورکا تعلق پاکستان سے ہے۔
خبر کا کوڈ : 370291
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب