1
4
Sunday 16 Jun 2019 01:30

سعودی عرب میں شراب کی فروخت اور استعمال سے پابندی اٹھنے کا امکان، عالمی میڈیا

سعودی عرب میں شراب کی فروخت اور استعمال سے پابندی اٹھنے کا امکان، عالمی میڈیا
اسلام ٹائمز۔ بین الاقوامی نیوز ایجنسی "بلومبرگ" نے بعض سعودی حکام کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ سعودی عرب میں شراب کی فروخت اور اس کے استعمال پر لگی پابندی عنقریب ہٹا لی جائے گی۔ سعودی حکام کا کہنا ہے کہ اس بات کا احتمال ہے کہ آئندہ برس سے سعودی عرب میں مقیم غیر ملکی باشندوں کو سعودی عرب میں شراب خریدنے اور پینے کی اجازت مل جائے گی۔ بین الاقوامی نیوز ایجنسی نے سعودی حکومت کے ساتھ قریبی تعلقات رکھنے والے غیر ملکی باشندوں سے نقل کیا ہے کہ سعودی حکومت بیرون ملک سے شراب کی درآمد کا پرمٹ جاری کرنے پر غور کر رہی ہے، بنابرایں سعودی دارالحکومت ریاض کے شمال میں واقع "ملک عبداللہ" نامی تجارتی مرکز احتمالاً وہ پہلی مارکیٹ ہوگا، جس میں شراب خریدنے اور شراب نوشی کرنے کی اجازت دی جائے گی۔

واضح رہے کہ 2017ء میں سعودی عرب کی حکومت کے موجودہ ولی عہد "محمد بن سلمان" کے ہاتھ میں آنے کے بعد سے وہاں بہت سی اجتماعی اور اقتصادی تبدیلیاں لائی جا رہی ہیں۔ خواتین کو گاڑی چلانے کا حق، سینماؤں اور جوئے و قماربازی کے اڈوں کا کھلنا، سرعام موسیقی اور رقص کی محفلوں کا انعقاد اور اب شراب فروشی اور شرابخوری کی اجازت کا دیا جانا ان تبدیلیوں میں سرفہرست ہے۔
خبر کا کوڈ : 799724
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

عمران رشید
Pakistan
بھٹو نے اپنے اقتدار کی طوالت کے لیے احمدی کافر قرار دئیے، جمعہ کو چھٹی، شراب اور ریس پہ پابندی، لیکن پھانسی چڑھ گیا. اسی طرح ایم بی ایس ایک اولن لبرل قوانین بنا کر اپنی بادشاہت پکی کرنے کے چکر میں ھے. لیکن حکومتیں انصاف سے قائم رہ سکتی ھیں صرف.
منتخب