0
Sunday 16 Oct 2011 22:59

دہشتگردی کیخلاف جنگ ڈھونگ ہے، حقانی نیٹ ورک کا معاملہ امریکا کی طے شدہ حکمت عملی ہے، مولانا فضل الرحمن

دہشتگردی کیخلاف جنگ ڈھونگ ہے، حقانی نیٹ ورک کا معاملہ امریکا کی طے شدہ حکمت عملی ہے، مولانا فضل الرحمن
کوئٹہ:اسلام ٹائمز۔ جمعیت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ امریکا کی سربراہی میں دہشتگردی کیخلاف لڑی جانیوالی جنگ ایک ڈھونگ ہے، اس جنگ کی آڑ میں امریکہ دوسرے ممالک کے وسائل تک رسائی حاصل کرنا چاہتا ہے۔ پاکستان کو ایک طے شدہ پروگرام کے تحت حقانی نیٹ ورک سے جوڑا جا رہا ہے۔ کوئٹہ میں جمعیت لائرز فورم کے زیراہتمام ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ امریکی کی حالیہ جنگ دہشتگردی کیخلاف نہیں ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کو طے شدہ پروگرام کے تحت حقانی نیٹ ورک سے جوڑا جا رہا ہے، جس کے ساتھ امریکا نے پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش شروع کر دی ہے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ امریکا نے پہلے حقانی نیٹ ورک پھر کوئٹہ شوریٰ کے حوالے سے پراپیگنڈہ کیا اور اب وہ پاکستان کے جوہری پروگرام کے حوالے سے پراپیگنڈہ شروع کرے گا۔ 
دیگر ذرائع کے مطابق جمعیت علماء اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ حقانی نیٹ ورک کا معاملہ حادثاتی نہیں بلکہ امریکہ کی طے شدہ حکمت عملی کا حصہ ہے۔ کوئٹہ میں جمعیت لائرز فورم سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہم پاکستان کو جمہوری ملک دیکھنا چاہتے ہیں لیکن شاید مولویوں کی جمہوریت قبول نہیں کی جاتی، غلط پالیسیوں کی وجہ سے پاکستان کی حیثیت بین الاقوامی دنیا میں ایک کھلونے کی سی بن گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جمعیت علماء اسلام کو دھکیلنے کے لئے انتہاپسند طالبان کو ابھارا گیا ہے، امریکی قیادت کو احساس ہونا چاہئے کہ ان کی پالیسیوں کے نتیجے میں پیدا ہونے والے خراب حالات سے دنیا بھر متاثر ہو گئی ہے۔ انھوں نے کہا کہ متحدہ مجلس عمل کی بحالی میں جماعت اسلامی رکاوٹ ہے۔
خبر کا کوڈ : 106865
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

منتخب
ہماری پیشکش