1
0
Friday 6 Sep 2019 22:36

کوہاٹ انتظامیہ نماز و ذکر نواسہ رسول (ص) روکنے کیلئے بضد

کوہاٹ انتظامیہ نماز و ذکر نواسہ رسول (ص) روکنے کیلئے بضد
رپورٹ: ایس اے زیدی
 
خیبر پختونخوا میں سندھ اور پنجاب کی نسبت اہل تشیع شہریوں کی تعداد کم ہے، تہم اس کے باوجود مختلف حکومتوں کے ادوار میں صوبائی و ضلعی انتظامیہ نے پنجاب کی مسلم لیگ نون کے دور حکومت کے برعکس یہاں شیعہ شہریوں کے ساتھ عزاداری کے مسائل کے حوالے سے کافی حد تک تعاون کیا۔ خیبر پختونخوا میں ایام محرم الحرام کے دوران مجالس و جلوس ہائے عزاداری اور علماء و ذاکرین پر پابندیاں، شیعہ شہریوں پر شیڈول فور وغیرہ پنجاب کے مقابلہ میں کم ہی رہے ہیں۔ شائد صوبائی حکومتوں اور اضلاع کی انتظامیہ کا رویہ عزاداری کے معاملات پر دہشتگردی کی وجہ سے نرم رہا ہے۔ موجودہ صورتحال یہ ہے کہ کوہاٹ شہر میں واقعہ کے ڈی اے (کوہاٹ ڈویلپمنٹ اتھارٹی) میں واقع الزاہرہ ہاوس نامی مکان میں بھی ذکر نواسہ رسول (ص) اور نماز پڑھنے تک کی اجازت نہیں دے رہی۔ واضح رہے کہ اس علاقہ میں سینکڑوں شیعہ گھرانے موجود ہیں اور انہوں نے حکومت سے مسجد کیلئے جگہ فراہم کرنے کا مطالبہ کئی سالوں سے کر رکھا ہے۔
 
دو محرم الحرام کو ضلعی انتظامیہ نے عزاداری سید الشہداء پر قدغن لگاتے ہوئے كے ڈی اے میں واقع اس مسجد و امام بارگاه ميں مجلس عزاء كے بعد رات كی تاريكی ميں اسے سیل کر دیا اور بعض عزاداروں کو بھی حراست میں لے لیا۔ ذرائع کے مطابق اسسٹنٹ كمشنر، ايس پی اور ڈی ايس پى كی نگرانی ميں کے ڈی اے امام بارگاه كو پھر سے سيل كر ديا گیا ہے اور 12 عزاداروں کے خلاف ایف آئی آر درج کر دی گئی ہے، جن میں بعض كو گرفتار كركے جرمہ جيل كوہاٹ بھيج ديا گیا۔ ضلع کوہاٹ سے تعلق رکھنے والے معروف شیعہ عالم دین اور مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری مالیات سے اسلام ٹائمز نے اس مسئلہ پر خصوصی بات چیت کی۔ اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ کے ڈی اے میں اہل تشیع کے سینکڑوں گھر ہیں، جو کہ ہزاروں نفوس پر مشتمل آبادی بنتی ہے، یہاں ہر گلی میں مختلف مسالک کی مساجد موجود ہیں، جن کی تعداد سینکڑوں میں بنتی ہے۔ یہاں عموماً حکومت مسجد کیلئے خود جگہ دیتی ہے، ہمارے مومنین 20 سال سے یہ مطالبہ کر رہے ہیں کہ حکومت یہاں ہمیں مسجد کیلئے جگہ فراہم کرے، تاہم حکومت اب تک غیر سنجیدگی کا مظاہرہ کرتی آئی ہے۔
 
علامہ اقبال بہشتی کا مزید کہنا تھا کہ جس پارٹی کی بھی صوبہ میں حکومت رہی ہے انکا یہی رویہ یہی رہا۔ اہل تشیع نے حکومت کے رویہ سے مایوس ہوکر خود یہاں زمین خرید کر ایک مکان بنایا، پھر وہاں ہی لوگ اکٹھے ہوکر نماز پڑھتے ہیں۔ گذشتہ عید الاضحیٰ کے موقع پر پولیس آئی مکان کو سیل کر دیا اور جن لوگوں نے وہاں نماز پڑھی ان پر ایف آئی آر بھی درج کی۔ محرم الحرام کے دوران یہاں عصر کے وقت درس قرآن ہوتا ہے، پھر باجماعت نماز مغرب ہوتی ہے اور پھر نماز مغرب کی ادائیگی کے بعد اندر ہی خاموشی سے عزاداری ہوتی ہے۔ اب گذشتہ دنوں پھر پولیس نے کارروائی کی، چند افراد کو گرفتار کیا، مکان کو دوبارہ سیل کیا اور دو افراد کو جیل بھی بھیج دیا۔ حالانکہ کچھ سال قبل لوگوں نے پشاور ہائیکورٹ سے رجوع کیا، وہاں سے باقاعدہ فیصلہ آیا اور عدالت نے کوہاٹ انتظامیہ کو آرڈر جاری کئے کہ انہیں مسجد کیلئے ان کی آبادی کے بالکل نزدیک جگہ دی جائے۔ لیکن کوہاٹ کی انتظامیہ نے ہائیکورٹ کے فیصلہ کو ہوا میں اڑا دیا اور وہ توہین عدالت کی مرتکب ہورہی ہے۔
 
انہوں نے بتایا کہ انتظامیہ موقف یہ اپناتی ہے کہ آپ یہاں مجلس نہیں کرسکتے۔ ہمارا ان سے سوال ہے کہ کیا نماز بھی نہیں پڑھی جاسکتی۔؟ نماز عید کے موقع پر ایف آئی آر کا اندراج اس کا ثبوت ہے کہ یہ اب نماز بھی پڑھنے سے لوگوں کو روک رہے ہیں۔ ڈی پی او، ڈی سی او تو اس معاملہ میں فرنٹ پر ہیں، ان کے پیچھے کون ہے یہ معلوم نہیں۔ جب ان سے پوچھا جاتا ہے کہ آپ ایسا کیوں کر رہے ہیں تو کہتے ہیں کہ ہم اوپر سے مجبور ہیں، اب معلوم نہیں اوپر کون سی خلائی مخلوق کیوجہ سے یہ مجبور ہیں۔ مقامی لوگوں نے ہر فورم سے رجوع کیا اور ہر دروازہ کھٹکھٹایا۔ ہمارے لوگ علاقہ ایم این اے اور وفاقی وزیر شہریار آفریدی اور ایم پی اے ضیاء اللہ کے گھروں پر بھی جاتے رہے ہیں کہ ہمارا یہ آئینی اور شرعی حق ہمیں دیا جائے، لیکن کوئی شنوائی نہیں ہوئی۔ واضح رہے کہ گذشتہ روز ایم ڈبلیو ایم خیبر پختونخوا کے سیکرٹری تحفظ عزاداری نیئر جعفری نے کوہاٹ انتظامیہ کے اس ظالمانہ اور غیر آئینی رویہ کیخلاف ایف آئی آر درج کروا دی ہے۔
خبر کا کوڈ : 814918
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے

زیدی صاحب مسلم لیگ کی حکومت هوتی تو آپ سپر انقلابی لوگ فورا عزاداری کو محدود کرنے کا ایجنڈا قرار دیکر سعودی عرب تک کو مورد الزام قرار دیتے اور نواز، شهباز کو شیعه دشمن اور رانا ثناء پر الزام لگانے میں ذرا دیر نه لگاتے که یه شخص تکفیری دهشت گردوں کے ووٹ کی خاطر شیعه اور عزاداری کے خلاف بر سر پیکار ہے, اب تو آپ کے لاڈلے کی حکومت ہے, جس کے لیے تین ماه تک اسلام آباد میں آپ لوگوں نے بهوک پیاس برداشت کی اور دهرنا میں( اور اس وقت کی حکومت کو یزیدی دور کہا) هراول دسته بنے اب بهی عزاداری کے خلاف اقدام اور شیعه دشمن مسنگ پرسن کیوں؟!! اب تو دهرنا اور بهوک کی دهمکی دینا بهی آپ لوگوں کو بهول گئی؟!!! اور حتی ابهی تو انتخابات کا گلگت بلتستان میں نام و نشان نہیں اور هنوز دلی دور است, لیکن آپ کے سپر انقلابی لوگ بن بلائے گلگت بلتستان میں اپنی طرف سے خود کو الزام خان کا اتحادی ظاهر کر رہے ہیں اور نیازی تحریک والے انکار کر رہے ہیں!!! حالانکه اب بهی حکومتی شیعه دشمن پالیسی اور مسنگ پرسن میں ذرا فرق نہیں آیا اور یافث نوید صاحب ۔۔۔ اور دوسرے شیعه جبری گمشدگان کی ابهی تک کوئی خبر نہیں۔