0
Wednesday 2 Apr 2014 21:27

میاچھر نگر کے عوام میں شدید خوف و ہراس ، جیالوجیکل سروے ٹیم کی رپورٹ پر عمل درآمد سوالیہ نشان بن گیا

میاچھر نگر کے عوام میں شدید خوف و ہراس ، جیالوجیکل سروے ٹیم کی رپورٹ پر عمل درآمد سوالیہ نشان بن گیا
اسلام ٹائمز۔ میاچھر نگر میں لینڈ سلائیڈنگ کی صورتحال سنگین ہوگئی۔ علاقہ ریڈ زون قرار دیدیا گیا، مزید 25 گھرانوں کو محفوظ مقام پر منتقل کرنے کی سفارش، بروقت اقدامات نہ کئے گئے تو میاچھر نگر مکمل طور پر تباہ ہو سکتا ہے۔ جس کے نتیجے میں شاہراہ قراقرم مستقل بند اور  20 کلومیٹر طویل نیا ڈیم وجود میں آئیگا۔ تفصیلات کے مطابق جیالوجیکل سروے آف پاکستان کی تازہ رپورٹ میں سنسنی خیز انکشافات سامنے آ گئے ہیں۔ تازہ سروے میں سنگین نوعیت سامنے آنے کے بعد انجینئرنگ کور کی نئی سروے ٹیم عمل درآمد کا جائزہ لینے کے لیے میاچھر نگر پہنچ گئی۔

میاچھر نگر کے عوام میں شدید خوف و ہراس، چار ماہ قبل بےگھر کئے جانے والے سینکڑوں متاثرین تاحال بےیارو مددگار ہیں۔ جیالوجیکل سروے ٹیم کی رپورٹ پر عمل درآمد سوالیہ نشان بن گئی۔ میاچھر نگر میں چار ماہ قبل بدترین لینڈ سلائیڈنگ کی وجہ سے علاقے میں دفعہ 144 نافذ کی جا چکی ہے اور علاقے میں ہر طرح کی ٹریفک کی آمدورفت سمیت کھیتی باڑی پر بھی پابندی عائد کی جا چکی ہے۔ ایک طرف پابندی دوسری جانب متاثرین امداد سے محروم مسیحا کے منتظر ہیں جبکہ ضلعی انتظامیہ کی کارکردگی بھی اس حوالے سے صفر ہے۔ جیالوجیکل سروے ٹیم کی رپورٹ منظر عام پر آنے کے بعد صوبائی انتظامیہ کے لیے ایک نیا غیر معمولی چیلنج کا سامنا ہے۔ عدم توجہی کی صورت میں کسی بھی وقت بڑا سانحہ رونما ہو سکتا ہے۔ جس سے پاک چین کا واحد دفاعی اور تجارتی راستہ مکمل بند ہو سکتا ہے۔ علاقے کے عوام اور متاثرین نے چیف   سیکرٹری گلگت بلتستان یونس ڈاگھا سے داد رسی کی اپیل کی ہے۔
خبر کا کوڈ : 368424
رائے ارسال کرنا
آپ کا نام

آپکا ایمیل ایڈریس
آپکی رائے